مانچیسٹر دھماکہ: ’لیبیا نے سلمان عبیدی کی ایک ماہ تک نگرانی کی تھی‘

برطانیہ تصویر کے کاپی رائٹ GMP

لیبیا کے سکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ مانچیسٹر دھماکے کی منصوبہ بندی دسمبر سے کی جا رہی تھی جس میں 22 افراد ہلاک ہوئے۔

لیبیا کے سکیورٹی حکام نے بی بی سی کو بتایا کہ حملے سے قبل سلمان عبیدی پر لیبیا میں کم از کم ایک ماہ تک نگرانی کی گئی۔

لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں حکام کا کہنا ہے کہ برطانیہ کے ساتھ سکیورٹی تعاون کو مزید بہتر بنانے کی ضرورت ہے تاکہ اس قسم کے حملوں کا تدارک کیا جا سکے۔

مانچیسٹر حملہ: سلمان عبیدی کون تھا؟

’میں سلمان کو جانتا تھا، اسے برین واش کیا گیا تھا‘

’ایم آئی فائیو کو عبیدی کے بارے میں تین بار خبردار کیا گیا تھا‘

مانچیسٹر خود کش حملے پر لیبیائی جہادی عناصر کی چھاپ

سلمان نے لیبیا میں اپنے خاندان کے ساتھ ایک ماہ گزارا اور پھر واپس برطانیہ آ گئے جہاں انھوں نے دھماکہ کیا۔

لیبیا کے حکام کا کہنا ہے کہ لیبیا میں آمد پر سکیورٹی حکام سلمان پر نظر رکھے ہوئے تھے۔ حکام کا کہنا ہے کہ سلمان کے ساتھ ساتھ ان کے بھائی ہاشم اور والد رمضان کی بھی نگرانی کی جا رہی تھی۔

لیبیا کے حکام کا کہنا ہے کہ سکیورٹی فورسز روزانہ ہاشم عبیدی اور رمضان عبیدی کی تفتیش کر رہی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Special Deterrence Force/Libyan Interior Ministry
Image caption ہاشم عبیدی نے حراست میں اعتراف کیا ہے کہ انھوں نے سلمان کے ساتھ 2015 میں اپنے آپ کو دولت اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم میں شمولیت اختیار کی تھی

لیبیا کے سکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ ان کے پاس سلمان کے برطانیہ اور لیبیا میں سرغنہ کے بارے میں اہم معلومات تھیں۔ تاہم ان کا کہنا ہے کہ سکیورٹی امور پر ان کے امریکہ کے ساتھ زیادہ قریبی تعلقات بہ نسبت برطانیہ کے۔

لیبیا کا کہنا ہے کہ ہاشم عبیدی نے حراست میں اعتراف کیا ہے کہ انھوں نے سلمان کے ساتھ 2015 میں اپنے آپ کو دولت اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم میں شمولیت اختیار کی تھی۔

حکام کا کہنا ہے کہ سلمان نے بم بنانے کا سامان برطانیہ میں خریدا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں