اسامہ، ان کے خِاندان اور القاعدہ کے ارکان پر کیا گزری
اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

ایک نئی کتاب میں اسامہ اور ان کے خاندان پر انکشافات

تورا بورا سے فرار ہوجنے کے بعد اسامہ بن لادن کہاں تھے؟

اس سوال کے جواب میں قیاص ارائیاں بہت ہوئی ہیں اور افواہیوں بھی بہت گردش کرتی رہی ہیں لیکن اب ایک نئی کتاب میں القاعدہ کے رہنما کے اِن 10 برس کے عرصے کی کہانی بڑے تصفیلی طریقے سے بیان کی گئی ہے۔

’دا ایگزائل‘ نامی اس کتاب کے مصنفین کیتھی سکاٹ کلارک اور ایڈریئن لیوی ہیں جن دونوں کا انویسٹیگیٹیو جرنلزم میں ایک بڑا نام ہے۔ کتاب میں نہ صرف یہ بتایا گیا ہے کہ دنیا کا ’مطلوب ترین مُجرم‘ کہلانے والا شخص کس طرح دنیا سے چُھپا رہا بلکہ یہ بھی کہ اُس کے خاندان اور تنظیم پر اس کا کیا اثر پڑا۔

عنبر خیری نے کتاب کے ایک مُصنف ایڈرئین لیوی سے بات کی اور پہلے یہ پوچھا کہ اس ڈرامائی اور سنسنی خیز کہانی پر تحقیق کرنے میں اُن کو وہ کیا معلومات مِلیں جو ان کو سب سے زیادہ حیران کُن لگیں؟