’خفیہ معلومات چین کو دینے پر‘ امریکی سفارتی اہلکار گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ایک سابق امریکی سفارتی اہلکار کو چینی حکام کو خفیہ دستاویزات دینے کے الزام میں گرفتار کر لیا گیا ہے۔

عدالتی دستاویزات کے مطابق ریاست ورجینیا سے تعلق رکھنے والے ساٹھ سالہ کیون ملروئے مارچ اور اپریل 2017 کے درمیان چینی شہر شنگائی گئے۔

معلومات افشا کرنے کے شبہے میں امریکی کنٹریکٹر گرفتار

یاہو نے ’امریکہ کے لیے خفیہ طور پر ای میلز کا معائنہ کیا‘

امریکی شہر شیکاگو کے ہوائی اڈے پر جب ان سے 16500 ڈالر کی نقد رقم برآمد ہوئی تو وہ اس حوالے سے وضاحت پیش نہیں کر سکے۔

محکمہِ انصاف کے ایک اعلیٰ اہلکار کا کہنا ہے کہ کیون ملروئے کے خلاف الزامات انتہائی سنجیدہ نوعیت کے ہیں۔

ایف بی آئی کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر اینڈرو ویئل کا کہنا تھا کہ ’کیون ملروئے کو ماضی میں اعلیٰ ترین سکیورٹی کلیرنس دی گئی تھی اور ان کے پاس خفیہ ترین دستاویزات تک رسائی تھی۔ مبینہ طور پر انھوں نے یہ دستاویزات ایک بیرونی حکومت کو دیے اور ان کا یہ دو بارہ کرنے کا بھی ارادہ تھا۔‘

مئی میں ایف بی آئی کو رضاکارانہ طور پر ایک انٹرویو دیتے ہوئے کیون ملروئے کا کہنا تھا کہ جس سخص سے انھوں نے شنگائی میں ملاقات کی اُس نے انھیں یہ بتایا تھا کہ وہ ایک تھنک ٹینک ایس اے ایس ایس کے لیے کام کرتا ہے۔

اس کے بعد سے امریکی حکام کا ماننا ہے کہ چینی جاسوس ایس اے ایس ایس کی ملازمت کو ایک بہانے کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔

اسی بارے میں