سابق ولی عہد محمد بن نایف نظر بند نہیں ہیں: سعودی حکام

محمد بن نایف تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سعودی شاہ سلمان نے گذشتہ ہفتے 57 سالہ محمد بن نایف کو معزول کر کے اپنے بیٹے محمد بن سلمان کو ولی عہد نامزد کر دیا تھا

سعودی حکام نے ان اطلاعات کی تردید کی ہے کہ سابق ولی عہد محمد بن نایف کو ان کے محل تک محدود کر دیا گیا ہے۔

خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق ایک سینیئر سعودی عہدے دار نے جمعرات کو نیویارک ٹائمز کی اس خبر کو مسترد کر دیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ شہزادہ محمد بن نایف کو ان کے محل میں نظربند کر دیا گیا ہے اور ان کے بیرونِ ملک سفر پر بھی پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

گذشتہ ہفتے سعودی شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے اپنے بھتیجے محمد بن نایف کی جگہ اپنے بیٹے محمد بن سلمان کو اپنا جانشین مقرر کیا تھا۔

سعودی شاہ نے بھتیجے کی جگہ بیٹے کو ولی عہد بنا لیا

نئے سعودی ولی عہد کے بارے میں پانچ اہم حقائق

سعودی حکام نے روئٹرز کو بتایا کہ سابق ولی عہد اور سابق وزیرِ داخلہ محمد بن نایف مہمانوں سے ملاقاتیں کر رہے ہیں اور ان کی یا ان کے خاندان کی نقل و حرکت پر کسی قسم کی پابندی نہیں ہے۔

امریکہ میں محمد بن نایف کو اس بات کے لیے سراہا جاتا ہے کہ انھوں نے 2003 اور 2006 میں کہ سعودی عرب میں القاعدہ کو کچلنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

محمد بن سلمان کی بطور ولی عہد تقرری سے دو سال سے جاری ان افواہوں کا خاتمہ ہو گیا تھا کہ سعودی عرب میں پردے کے پیچھے ان کے اور سابق عہد کے درمیان جانشینی کے معاملے پر کشمکش چل رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption امریکہ میں محمد بن نایف کو 2003 اور 2006 میں سعودی عرب میں القاعدہ کو کچلنے میں اہم کردار ادا کرنے پر سراہا جاتا ہے

مبصرین کا کہنا ہے کہ تقرری کے باوجود محمد بن سلمان کے سامنے طاقتور رشتے داروں، مذہبی علما اور قبائلی عمائدین کے سامنے اپنی اہلیت ثابت کرنے کا چیلنج برقرار ہے۔

نیویارک ٹائمز نے چار حالیہ و سابق امریکی حکام اور شاہی خاندان سے قریب سعودی شہریوں کے حوالے سے کہا تھا کہ محمد بن نایف کے 'ملک چھوڑنے پر پابندی لگا دی گئی ہے' اور انھیں ساحلی شہر جدہ میں واقع اپنے 'محل تک محدود کر دیا گیا ہے۔'

روئٹرز کے مطابق سعودی عہدے دار نے کہا کہ یہ خبر 'من گھڑت' ہے اور کہا کہ محمد بن نایف اخبار کے خلاف مقدمہ دائر کر سکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 'محمد بن نایف کے لیے سوائے اپنے سرکاری عہدوں سے دست بردار ہونے کے کچھ بھی تبدیل نہیں ہوا۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں