منی سکرٹ ویڈیو: سعودی پولیس نے خاتون کو رہا کر دیا

سعودی عرب تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER

سعودی پولیس نے اس نوجوان خاتون کو بنا کسی الزام کے چھوڑ دیا ہے جو ایک ویڈیو میں منی سکرٹ پہنے دیکھی گئی تھیں۔

اس خاتون کی ’نامناسب‘ لباس میں ویڈیو سامنے آنے کے بعد تفتیش کے لیے بلایا گیا تھا جس کے بعد ملک میں گرما گرم بحث شروع ہو گئی تھی۔

وزارت اطلاعات کا کہنا ہے کہ استغاثہ نے اب یہ کیس بند کر دیا ہے۔

٭ ’آخر میں کہانی سکرٹ کی نکلی‘

٭ ’یا شیخ میرا عبایہ کیسا ہے؟‘

اس خاتون کو منگل کے روز تفتیش کرنے کے بعد چھوڑ دیا گیا۔

انھوں نے تفتیش کے دوران تسلیم کیا کہ وہ اس مقام کے گرد بنا اپنے سر کو ڈھانپے اور منی سکرٹ پہنے گھوم رہی تھیں۔

’خلود‘ نامی یہ خاتون ایک ماڈل ہیں اور انھیں تاریخی قلعے اشیقر کے گرد چکر لگاتے ہوئے ایک مختصر سی ویڈیو میں دیکھا گیا تھا۔

خیال رہے کہ سعودی عرب میں خواتین کے لیے عوامی مقامات پر ’عبایہ‘ کے ساتھ ساتھ حجاب پہننا لازم ہے۔

اس ویڈیو کے منظر عام پر آتے ہی سوشل میڈیا پر گرما گرم بحث چھڑ گئی۔ بعض کا کہنا تھا کہ اس خاتون کو مسلمانوں کے ملک میں موجود کپڑوں کے سخت قانون کو توڑنے پر گرفتار کیا جائے۔

وزارت اطلاعات کے مطابق اس خاتون کو یہ معلوم نہیں تھا کہ اس ویڈیو کو اپ لوڈ کر دیا گیا ہے۔

بعض سعودیوں نے اس خاتون کے دفاع میں آواز اٹھاتے ہوئے ان کی ’بہادری‘ کی تعریف کی تھی۔

یاد رہے کہ اختتام ہفتہ پر یہ ویڈیو ابتدائی طور پر سنیپ چیٹ پر شائع کی گئی تھی، جس میں خلود کو نجد صوبے کے اشیقر قلعے میں ایک خالی گلی میں گھومتے ہوئے دیکھایا گیا تھا۔

نجد صوبہ سعودے عرب کے قدامت پسند سوچ رکھنے والے علاقوں میں سے ایک ہے۔

یہ ویڈیو جلد ہی ٹوئٹر پر بہت سے سعودیوں میں پھیل گئی جہاں اس حوالے سے آرا منقسم دکھائی دے رہی ہے۔ بعض کا کہنا ہے کہ خلود کو سزا ملنی چاہیے جبکہ دیگر کے خیال میں انھیں وہ پہننے کی اجازت ہونی چاہیے جو وہ پہننا چاہتی ہیں۔

اسی بارے میں