فرانس میں جنگل کی آگ، تصاویر میں

آگ تصویر کے کاپی رائٹ AFP

فرانس میں حکام کے مطابق جنوب مشرقی علاقے میں بھڑکنے اٹھنے والی آگ کے باعث دس ہزار افراد انخلا پر مجبور ہوگئے ہیں۔

پروانس-آلپ-کوت دازور کے علاقے میں بھڑکنے والی آگ پر قابو پانے کے لیے سینکڑوں فائرفائٹرز تعینات کیے گئے ہیں۔

اس سے قبل فرانس نے اپنے ہمسایہ یورپی یونین ممالک سے آگ سے نمٹنے کے لیے درخواست کی تھی۔

آگ لگ جائے تو کیا کریں؟

پرتگال میں ’آسمانی بجلی‘ سے لگی آگ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

بحیرہ روم کے ساحل کے کنارے واقع پہاڑی علاقے اور کروسیکا کے جزیرے پر تقریبا 4000 ہیکٹرز (تقریبا 15 مربع کل میٹر) جل کر راکھ ہوگیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

خبررساں ادارے اے ایف پی نے ایک فائر اہلکار کے حوالے سے بتایا کہ 'دس ہزار لوگوں کا حالیہ انخلا آگ بڑھنے کے بعد کیا گیا ہے۔ '

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اہلکار کے مطابق گرمیوں میں اس علاقے میں آبادی دو سے تین گنا زیادہ ہوجاتی ہے۔

علاقے میں قائم ایک مشہور رزارٹ سینٹ ٹروپیز اور اس کے گردونواح کا علاقہ آگ سے شدید متاثر ہوا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

کروسیکا میں سینکڑوں گھروں کو خالی کروایا گیا ہے۔

مجموعی طور پر چار ہزار فائرفائٹرز پیر سے آگ بجھانے کی کوشش کر رہے ہیں اور انھیں فوج کی مدد بھی حاصل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

حکام کے مطابق آگ سے 12 فائرفائٹر زخمی جبکہ 15 پولیس اہلکار دھوئیں کے باعث متاثر ہوئے ہیں۔

سینٹ ٹروپیز کے قریب قیام پذیر ایک برطانوی سیاح لیزا مینوٹ نے بی بی سی کو بتایا کہ تمام سیاحوں کو مقامی وقت کے مطابق رات دو بجے نکالا گیا اور انھوں نے رات ساحل سمندر پر گزاری کیونکہ لکڑی کے بنے گھروں میں رہنا پرخطر تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ 3000 کے قریب سیاحوں اور دیگر افراد نے ساحل سمندر پر سرد ہواؤں کا سامنا کرتے ہوئے رات ساحل سمندر پر گزاری۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں