’انڈیا نے چینی سرحد پر فوجیوں کی تعداد کم کر دی‘

فوج تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption بھارت نے چین کے دعوں کو غلط قرار دیا ہے

اکنامک ٹائمز کے مطابق چین کی حکومت نے دعویٰ کیا ہے کہ ڈوكلام میں انڈیا نے اپنے فوجیوں کی تعداد کم کر دی ہے۔

15 صفحات کی ایک دستاویز کے ساتھ چینی وزارت خارجہ نے دعویٰ کیا ہے کہ ڈوكلام سرحد پر جہاں پہلے تقریباً 400 بھارتی فوجی تھے، وہاں اب ان کی تعداد گھٹ کر 40 رہ گئی ہے۔

دوسری طرف انڈیا نے چین کے اس دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ چین کی وزارت خارجہ کی طرف سے دی گئی معلومات غلط ہیں اور دونوں ممالک کے تقریباً 350 تا 400 فوجی ایک دوسرے کے سامنے ڈٹے ہوئے ہیں۔

چینی دستاویز میں کہا گیا ہے کہ جون 2017 کو چین ڈوکلام علاقے میں سڑک بنا رہا تھا کہ 18 جون کو 270 سے زیادہ انڈین فوجی ہتھیاروں سمیت دو بلڈوزر لے کر سکم سیکٹر سے ڈوکلام کے نزدیک سرحد پار پہنچے۔ انڈین فوجی سڑک بنانے کے کام میں رکاوٹ ڈالنے کے مقصد سے چینی علاقے میں 100 میٹر اندر تک گھس آئے۔ اس وقت وہاں انڈین فوجیوں کی تعداد 400 تک پہنچ گئی تھی۔‘

دستاویز میں دعوی کیا گیا ہے کہ 'انڈین فوجیوں نے وہاں تین خیمے گاڑ دیے اور چین کی سرحد میں 180 میٹر اندر تک گھس گئے۔ جولائی کے آخر تک اب بھی 40 بھارتی فوجی اور ایک بلڈوزر غیر قانونی طریقے سے چینی سرحد میں موجود ہے۔‘

چین کے دعووں کے برعکس انڈیا نے کہا ہے کہ اس کے تقریباً 350 جوان گذشتہ چھ ہفتوں سے ڈوكلام میں تعینات ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں