پرتگال میں مذہبی تقریب کے دوران درخت گرنے سے 13 افراد ہلاک، 49 زخمی

پرتگال تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پرتگال کے جزیرے مدیرا میں ایک مذہبی تقریب کے دوران درخت گر جانے سے 13 افراد ہلاک اور 49 زخمی ہو گئے ہیں۔

مرنے والوں میں دو بچے بھی شامل ہیں جبکہ زخمیوں میں کچھ غیر ملکی بھی ہیں۔

فنچال نامی قصبے میں ہونے والے اس حادثے کی ایک ویڈیو سامنے آئی ہے جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ عوام کے ہجوم سے بھرے ہوئے چوک پر درخت گر رہا ہے جس سے ہر طرف افراتفری مچ گئی ہے۔

گھانا کی آبشار پر درخت گرنے سے 20 افراد ہلاک

خبروں کے مطابق دوپہر 12 بجے کے قریب فاؤنٹین سکوائر نامی چوک پر گرنے والا درخت بلوط تھا اور اس کی عمر تقریباً 200 سال تھی۔

اس حادثے کے بعد مدیرا میں تین دن کے سوگ کا اعلان کر دیا گیا ہے اور پرتگال کے صدر مارسیلو ریبیلو ڈی سوسا بھی جزیرے پر پہنچ گئے ہیں جہاں انھوں نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے رنج و غم کا اظہار کیا۔

مدیرا یورپی سیاحوں کے لیے ایک پرکشش منزل ہے اور وہ پرتگال کے زیر انتظام جزائر میں سب سے بڑا جزیرہ ہے اور ملک کے جنوب مغرب میں واقع ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حادثے کے مقام پر امدادی کاروائیاں جاری ہیں

'درخت کھوکھلا تھا'

اطلاعات کے مطابق کئی لوگ ایک مقامی رومن کیتھولک گرجا گھر میں مذہبی تقریب منانے کے لیے جمع ہوئے تھے۔ دی لیڈی آف ماؤنٹ فیسٹیول کے نام سے جانے والا یہ تہوار مدیرا کا سب سے بڑا تہوار ہے اور اس موقعے پر یہاں عام تعطیل ہوتی ہے۔

ایک عینی شاہد نے کہا کہ 'مجھے بہت زور دار آواز آئی اور میں نے دیکھا کہ درخت تیزی سے گر رہا ہے اور کئی لوگ جان بچانے کے لیے بھاگ رہے تھے لیکن کئی درخت کے نیچے آ گئے۔'

موقعے پر موجود ایک اور عینی شاہد نے بتایا کہ 'یہ واقعہ میں کبھی نہیں بھول سکتا۔ ہمیں بھاگنے کے لیے بہت تھوڑا وقت ملا تھا اور ہمیں بعد میں احساس ہوا کہ لوگ اس درخت کے نیچے دب گئے ہیں۔'

ہنگامی امداد فراہم کرنے والے ادارے حادثے کے جائے وقوعہ پر فوراً پہنچ گئے تھے۔ مدیرا کے سیکریٹری برائے صحت پیڈرو راموس نے کہا کہ زخمی ہونے والوں کچھ کا تعلق جرمنی، ہنگری اور فرانس سے ہے۔

یاد رہے کہ اس سال ہونے والا تہوار اس لحاظ سے زیادہ اہمیت کا حامل تھا کیونکہ گذشتہ سال یہ تہوار جزیرے کے جنگلات میں آگ لگ جانے کے سبب منسوخ کر دیا گیا تھا۔

اسی بارے میں