بگ بین کی آئرٹن لائٹ کو 70 سال بعد بجھا دیا جائے گا

بگ بین تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اس سال فروری میں لی گئی تصویر میں آئرٹن لائٹ روشن دکھائی دے رہی ہے

لندن کے مشہور ترین گھڑیال بگ بین کے الزبتھ ٹاور پر لگی آئرٹن لائٹ کی روشنی 70 سال میں پہلی دفعہ بند کر دی جائے گی۔

سنہ 1885 سے لگی ہوئی آئرٹن لائٹ پارلیمان کی کارر وائی کے دوران شام کے روز جلائی جاتی تھی اور اس عرصے میں اسے صرف دونوں عالمی جنگوں کے دوران بند کیا گیا تھا لیکن اب اس کی مرمت کی اشد ضرورت پیش آگئی ہے جس کے لیے اس کے تمام پرزے علیحدہ کیے جائینگے۔

* لندن کا بگ بین خاموش ہونے والا ہے؟

* لندن کا بگ بین بائیں جانب جھکنے لگا

بگ بین کو 21 اگست کی دوپہر کو بند کر دیا جائے گا اور اگلے چار سال تک اس کی مختلف مرحلوں میں مرمت کی جائے گی۔ لیکن پارلیمان کے ہاؤس آف کامنز کی جانب سے کہا گیا ہے کہ وہ اس کی بندش کے دورانیہ پر 'خدشات' کی وجہ سے نظر ثانی کریں گے۔

کہا جاتا ہے کہ آئرٹن لائٹ ملکہ وکٹوریا کی درخواست پر لگائی گئی تھی تاکہ وہ بکنگھم محل سے دیکھ سکیں کہ پارلیمان کے اراکین سورج ڈھلنے کے بعد بھی وہاں موجود ہیں یا نہیں۔

اس لائٹ کا نام لبرل سیاستدان ایکٹن سمی آئرٹن سے منسوب ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بگ بین میں لگا ’عظیم گھنٹہ‘

ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ یہ لائٹ کب بند کی جائی گی اور کب تک بند رہے گی۔

یاد رہے کہ 2015 کی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ 'گریٹ کلاک' یا عظیم گھڑی کو فوری طور پر مرمت کی ضرورت ہے اور اس کے لیے چار کروڑ پاؤنڈ درکار ہیں۔ اگر گھڑی کی مرمت نہ کی گئی تو بین الاقوامی سطح پر ساکھ کو نقصان پہنچے گا۔

ہاؤس آف کامنز کی کمیٹی کی جانب سے بھی کہا گیا تھا کہ 156 سالہ پرانی گھڑی میں خرابیاں ہیں اور اس میں دارڑیں پڑھ گئی ہیں۔ مرمت کی ضرورت ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں