صدر ٹرمپ اور ان کی اہلیہ کی کینیڈی ایوارڈز کی تقریب میں شرکت سے معذرت

امریکہ تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption صدر ٹرمپ اور ان کی اہلیہ میلانیہ ٹرمپ کینیڈی ایوارڈز میں شرکت نہیں کریں گے

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ان کی اہلیہ میلانیہ ٹرمپ نے فن و ثقافت اور فنکاروں کی ترویج کے لیے منعقد کیے جانے والے سالانہ کینیڈی ایوارڈز میں شرکت کرنے سے یہ کہہ کر معذرت کر لی ہے کہ وہ لوگ جو اس تقریب میں شرکت کر رہے ہیں وہ 'بغیر کسی سیاسی مداخلت کے لطف اٹھا سکیں۔'

اس ایوارڈ میں شرکت کرنے والے چند مہمان جن کو ایوارڈ ملنا تھا، انھوں نے کہا تھا کہ وہ تقریب سے پہلے وائٹ ہاؤس میں منعقد ہونے والے عشائیے کا بائیکاٹ کریں گے۔

وائٹ ہاؤس کی جانب سے صدر ٹرمپ کا دفاع

نسلی ہنگاموں کے لیے دونوں اطراف قصوروار ہیں: ٹرمپ

امریکہ میں سفید فام نسل پرستی فروغ پا رہی ہے؟

کینیڈی ایوارڈ میں فنکاروں کو لائف ٹائم اچیومنٹ کے اعزاز سے نوازا جاتا ہے۔

مارچ میں بجٹ کے بارے میں خطاب کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے پبلک براڈکاسٹنگ اور فنون لطیفہ کے لیے مختص کیے گئے سرکاری فنڈز میں کمی کرنے کا اشارہ دیا۔

اس کے علاوہ ورجینیا میں ہونے والے نسلی ہنگاموں کے بعد سے صدر ٹرمپ شدید تنقید کا نشانہ بنے رہے ہیں۔

ڈیموکریٹس اور ری پبلیکن پارٹی کی جانب سے صدر ٹرمپ پر الزام لگایا ہے کہ وہ ان ہنگاموں میں سفید فام نسل پرستوں کے ساتھ نسل پرستی کے خلاف مظاہرہ کرنے والوں کو بھی قصور وار ٹھہرا رہے ہیں۔

وائٹ ہاؤس کی جانب سے ایک اعلامیے میں کہا گیا: 'صدر اور خاتون اول نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ اس سال ہونے والے کینیڈی ایوارڈز میں شرکت نہیں کریں گے تاکہ تقریب میں شامل اعزاز جیتنے والے مہمان بغیر کسی سیاسی مداخلت کے پروگرام کا لطف اٹھائیں۔ خاتون اول میلانیہ ٹرمپ بھی اپنے شوہر صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ کینیڈی ایوارڈ میں اعزاز حاصل کرنے والوں کو تہہ دل سے مبارک باد پیش کرتی ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اس سال کینیڈی ایوارڈ میں (بائیں جانب سے) رقاص کارمن لاوالاڈے، گلوکارہ گلوریا سٹیفان، ہپ ہاپ فنکار ایل ایل کول جے، گلوکار لیونل رچی اور ٹی وی پروڈیوسر نارمن لیئر کو نوازا جائے گا

رقاص کارمن لاوالاڈے، جن کو دسمبر میں ہونے والی اس تقریب میں نوازا جائے گا، نے اس ہفتے کہا کہ وہ تقریب سے پہلے وائٹ ہاؤس میں ہونے والے عشایئے میں شرکت نہیں کریں گی۔

'حال ہی میں ہونے والے واقعات اور ہمارے رہنماؤں کے ناگوار اور تباہ کن طرز بیان اور معاشرے میں تقسیم پیدا کرنے والے بیانیے کی روشنی میں اس عشایئے کی دعوت کو رد کردوں گی۔'

معروف گلوکار لیونل رچی نے بھی این بی سی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ شاید اس تقریب میں شرکت نہ کریں۔ 'آج کل جو ہو رہا ہے، جو تنازعات چل رہے ہیں، میں ان سے بالکل بھی خوش نہیں ہوں۔'

یاد رہے کہ شارلوٹسول میں ہونے والے ان ہنگاموں میں سفید فام نسل پرستوں کے خلاف مظاہرہ کرنے والی ایک 32 سالہ عورت بھی ہلاک ہو گئی تھی جن پر گاڑی چڑھا دی گئی تھی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں