ایران شام اور لبنان میں میزائل فیکٹریاں بنا رہا ہے: اسرائیل

Pictures reportedly taken from an Israeli satellite show what ImageSat International said was the site of an Iranian missile production facility currently being built near the town of Baniyas in north-western Syria (16 August 2017) تصویر کے کاپی رائٹ IMAGESAT INTERNATIONAL NV/REUTERS
Image caption اسرائیلی ماہرین کا کہنا ہے کہ شام میں بننے والی فیکٹری ایران کی فیکٹری سے مماثلت رکھتی ہے

اسرائیل کا کہنا ہے کہ ایران شام اور لبنان میں میزائل تیار کرنے والی فیکٹریاں تعمیر کر رہا ہے۔

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین تین یاہوں نے ایران پر الزام عائد کیا کہ وہ 'اسرائیل کو تباہ کرنے کے لیے شام کو اپنے عسکری اڈے میں تبدیل کر رہا ہے۔'

٭ ایرانی 'میزائل تجربے' کا جواب دینا ضروری ہے: بن یامین نتن یاہو

شام میں جاری جنگ میں صدر بشار الاسد کو ایرانی افواج اور لبنان کی تنظیم حزب اللہ کی حمایت حاصل ہے۔

اسرائیل کے وزیراعظم کی جانب سے یہ بیان اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیرس ملاقات کے بعد سامنے آیا۔

یاد رہے کہ اقوام متحدہ کے سربراہ رواں سال اپنا عہدہ سنھبالنے کے بعد مشرق وسطی کا پہلا دورہ کر رہے ہیں۔

گو کہ اسرائیلی وزیراعظم نے میزائل تیار کرنے والی ایرانی سائٹس کی تفصیلات نہیں بتائیں لیکن اُنھوں نے خبردار کیا کہ اسرائیل ایران کے ان اقدامات کو ہر گز تسلیم نہیں کرے گا۔

دو ہفتے قبل سٹیلائٹ سے تصاویر لینے والی اسرائیلی کمپنی امیج سیٹ انٹرنیشنل نے کچھ تصاویر شائع کیں تھیں جس سے شام میں حزب اختلاف کی حمایت کرنے والے اخبار میں شائع ہونے والی خبر کی تصدیق ہو گئی ہے۔

اخبار کے مطابق شام میں ایرانیوں کی زیر نگرانی میزائل بنانے والی فیکٹری تعمیر ہو رہی ہے۔

امیج سیٹ کا کہنا ہے کہ بحیرۃ روم کے ساحلی قصبے بانیاس کے قریب وادی جہانم میں تعمیر ہونے والی فیکٹری تہران کی میزائل فیکٹری سے مماثلت رکھتی ہے۔

اسرائیل کے اس بیان کے بعد ایران کی جانب سے تاحال کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اقوام متحدہ کے سربراہ نے اسرائیل کے وزیراعظم کو بتایا کہ وہ اسرائیل کی سکیورٹی کو لاحق خدشات سے آگاہ ہیں

اسرائیل کے وزیراعظم نے سیکریٹری جنرل پر زور دیا کہ لبنان میں اقوام متحدہ کے امن دستے حزب اللہ کو اسلحے کی ذخیرہ اندوزی سے روکنے میں ناکام رہے ہیں۔

مسٹر گوتیرس نے وعدہ کیا کہ وہ پوری کوشش کریں گے کہ اقوام متحدہ کے امن فورس کے دستے اپنی ذمہ داریاں پوری کریں۔

انھوں نے کہا کہ 'میں اسرائیل کی سکیورٹی کو لاحق خدشات کو سمجھ سکتا ہوں اور میں یہ دوہرانا چاہتا ہوں کہ اسرائیل کو تباہ کرنے کا منصوبہ یا ارادہ کسی صورت بھی قابلِ قبول نہیں ہے۔'

اس سے پہلے اسرائیل کے صدر نے بھی اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل سے ملاقات میں 'اسرائیل کے خلاف امتیازی سلوک ختم کرنے کے لیے' اقدامات کرنے کو کہا تھا۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیرس مشرقِ وسطی کے دورے کے دوران فلسطین اتھارٹی کے وزیر رامی حمداللہ سے ملاقات کریں گے اور وہ بدھ کو غزہ بھی جائیں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں