جرمنی: گھر کی صفائی پر پولیس کو فون

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption مجھے تمام دن کام کرنا پڑتا ہے اور میرے پاس کوئی فارغ وقت نہیں بچتا ہے: پولیس کو شکایت

جرمنی میں ایک گیارہ سالہ لڑکے کو ماں نے جب گھر کی صفائی کرنے کا کہا تو اس نے پولیس کی ہنگامی سروس کو فون کر دیا۔

لڑکے نے پولیس کے کال سینٹر پر فون کر کے’جبری مشقت‘ کی شکایت کی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ جرمنی کے علاقے ایچن سے گیارہ سالہ لڑکے جس کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی نے ہنگامی سروس ایک ایک صفر پر فون کر کے ایک پولیس افسر سے بات کی۔

لڑکے نے شکایت کی کہ’مجھے تمام دن کام کرنا پڑتا ہے اور میرے پاس کوئی فارغ وقت نہیں بچتا ہے۔‘

لڑکے کی ماں نے پولیس افسر کو بتایا کہ ان کے بیٹے نے اس سے پہلے بھی سکول سے چھٹیوں کے دوران متعدد بار گھر کا کام کرنے پر پولیس کو فون کرنے کی دھمکی دی تھی۔

ایک مقامی اخبار میں لڑکے اور پولیس افسر کے مابین ہونے والی گفتگو کی تفصیل شائع ہوئی ہے، جس کے مطابق پولیس افسر نے لڑکے سے کہا کہ وہ بتائے کہ کس طرح کی جبری مشقت کر رہا ہے۔

اس پر لڑکے نے جواب دیا کہ اسے گھر اور بالکونی کو صاف کرنا پڑئی۔

لڑکے کے جواب میں پولیس افسر نے کہا کہ کیا وہ جانتا ہے کہ جبری مشقت کیا ہوتی ہے تو اس پر بچے نے کہا کہ ہاں اسے معلوم ہے۔

بعد میں پولیس افسر نے لڑکے سے کہا کہ وہ اپنی ماں سے بات کرائیں جو اس وقت اس کے پاس کھڑی تھی۔

ماں نے وضاحت کی کہ فرش پر بکھرے کاغذ اٹھانے پر اس نے ہنگامی سروس پر فون کیا۔

’یہ سارا دن کھیلتا رہتا ہے اور جب اسے کہا گیا کہ جو گندگی اس نے پھیلائی ہے اس کو صاف کرے تو اس کو جبری مشقت قرار دے دیا۔‘