نائجیریا: اقوام متحدہ کی عمارت پر حملہ

تصویر کے کاپی رائٹ nta
Image caption کار بم حملہ اتنا شدید تھا کہ اس سے عمارت کی نچلی منزلیں تباہ ہو گئیں

نائجیریا کے دارالحکومت ابوجا میں اقوامِ متحدہ کے صدر دفتر پر ہونے والے ایک خود کش کار بم حملے میں اٹھارہ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

کار بم حملہ اتنا شدید تھا کہ اس سے عمارت کی نچلی منزلیں تباہ ہو گئیں۔ دھماکے میں درجنوں افراد زخمی ہوئے اور ان میں سے کئی کی حاصل تشویش ناک بتائی جاتی ہے۔

اسلام پسند تنظیم بوکو حرام کے ایک ترجمان نے بی بی سی کو ٹیلی فون کر کے حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ اس حملے میں ان لوگوں کو نشانہ بنایا گیا ہے جو دوسروں کی مدد کرنے کے لیے اپنی زندگیاں وقف کر دیتے ہیں۔

عینی شاہدین کے مطابق جمعہ کی صبح ہونے والے حملے میں بارود سے لدی ایک دو سکیورٹی بیریئرز کو عبور کرتے ہوئے عمارت کے استقبالیے سے ٹکرائی اور دھماکے سے پھٹ گئی۔

ہسپتالوں میں تعینات ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ان کے ہاں اتنی تعداد میں زخمی لائے گئے کہ ان کے لیے انہیں سنبھالنا مشکل ہو گیا اور انہیں خون کے عطیات کے لیے اپیل کرنا پڑی۔

اسلامی پسند تنظیم نائجیریا میں شریعت کے نفاذ کے لیے جدوجہد کر رہی ہے اور اطلاعات کے مطابق اس تنظیم نے جون میں پولیس ہیڈکوارٹرز پر ایک کار بم حملہ کیا تھا۔

اسی بارے میں