دہشتگردی کی سازش کا شبہ، سات گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دہشت گرد حملوں کے ہونے کے امکانات ہیں: پولیس اہلکار

برطانوی شہر برمنگھم میں پولیس نے ایک عورت سمیت سات افراد کو دہشتگردی کی سازش کے شبہ میں گرفتار کر لیا ہے۔

گرفتار کیے جانے والے مردوں کی عمر پچیس اور بتیس سال کے درمیان بتائی جا رہی ہے جبکہ خاتون بائیس سال کی ہیں۔

حکام کے مطابق مردوں کو برطانیہ میں دہشتگرد حملے کرنے کی سازش یا تیاری کرنے کے سلسلے میں گرفتار کیا گیا ہے جبکہ بائیس سالہ خاتون کو دہشت گردی سے وابستہ ضروری معلومات فراہم نہ کرنے کے سلسلے میں حراست میں لیا گیا ہے۔

بی بی سی کے نامہ نگار ڈینی شا کے مطابق یہ اب تک اس سال کی سب سے اہم گرفتاریاں ہیں۔

پولیس نے بتایا کہ برطانوی وقت کے مطابق یہ گرفتاریاں بروز پیر صبح ساڑے گیارہ اور دوپہر ایک بجے کے درمیان غیر مسلح افسران نے برمنگھم کے موسلی، سپارک بروک، سپارک ہل، وارڈ اینڈ اور بالسل ہیلتھ کے علاقوں سے کیں۔

پولیس کا کہنا تھا کہ شہر میں سپیشل ٹیموں کے ذریعے ملزمان کو ان کے گھروں اور دیگر علاقوں میں ڈھونڈا جا رہا تھا۔

ویسٹ مڈلینڈز پولیس کے اہلکار مارکس بیل نے بتایا ’یہ آپریشن ابھی ابتدائی مراحل میں ہے اور فی الوقت ہمارے لیے تفصیل سے کچھ بتانا مشکل ہے۔‘

انھوں نے کہا ’انگلینڈ، ویلز اور سکاٹ لینڈ میں دہشت گردی کا خدشہ ہے اور دہشت گرد حملوں کے ہونے کے امکانات ہیں۔‘

ہمارے نامہ نگار کے مطابق چونکہ یہ گرفتاریاں غیر مسلح افراد نے کیں اس لیے ممکن ہے کہ اس وقت کسی قسم کا خطرہ نہیں تھا۔

اسی بارے میں