ڈرون طیارے استعمال کرنے کا امریکہ کا پہلا برملا اظہار

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption خفیہ جاسوس طیاروں کو القاعدہ اور طالبان کے اراکین کو نشانہ بنانے کے لیے یمن، پاکستان اور دیگر مقامات پر استعمال کیا جارہا ہے۔

امریکی وزیرِ دفاع لیون پنیٹا نے شدت پسندوں کو نشانہ بنانے کے لیے بغیر پائلٹ کے طیارے استعمال کیے جانے کا پہلی بار برملا اظہار کیا ہے۔

خبررساں ادارے اے پی کے مطابق، امریکہ کے خفیہ ادارے سی آئی اے کی جانب سے شدت پسندوں کو نشانہ بنانے کے لیے ڈرون طیاروں کے استعمال پر امریکی حکام عام طور پر چپ سادھے رکھتے تھے تاہم اب اس معاملے سے پردہ اٹھتا دکھائی دے رہا ہے۔

سی آئی اے کے سابق ڈائریکٹر لیون پنیٹا نے اٹلی کے شہر سِسلی میں نیٹو کے فوجی اہلکاروں سے ملاقات میں ڈرون طیاروں کے معائنے پر کہا ’اپنی پچھلی ذمہ داریوں کے دوران میں ان سے بہت اچھی طرح واقف ہوں۔‘

وزیرِ دفاع اور سی آئی اے کے سابق ڈائریکٹر لیون پنیٹا اپنی گفتگو میں شاذ و نادر ہی ڈرون طیاروں کا ذکر کرتے ہیں تاہم انہوں نے گزشتہ روز اٹلی کے شہر نیپلز میں نیٹو کے فوجیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ’میرے گزشتہ عہدے کے نسبت اس عہدے پر استعمال کرنے کے لیے زیادہ ہتھیار موجود ہیں اور پریڈیٹرز (خفیہ جاسوس طیارے) اتنے برے بھی نہیں ہیں۔‘

یہ بات انہوں نے نیپلز میں واقع فوجیوں سے بھرے آڈیٹوریم میں ازراہِ تفنن کہی۔ وہ برسلز میں نیٹو کے اعلٰی اہلکاروں سے ملاقات کے بعد نیپلز پہنچے تھے۔ وزرات دفاع کا عہدہ سنبھالنے کے بعد یہ ان کا پہلا دورہ ہے۔

خبررساں ادارے رائٹرز کے مطابق نیپلز کے بعد وہ بحریہ کے ہوائی اڈہ سِسلی پہنچے جہاں انہوں نے بین الاقوامی فوج کے اہلکاروں سے ملاقات کی جو لیبیا کے مشن میں بغیر پائلٹ کے طیارے گلوبل ہاک استعمال کررہے ہیں۔

لیون پنیٹا نے سی آئی اے کی جانب سے استعمال کیے جانے والے ڈرون طیاروں کا دو بار تذکرہ کیا جن کے بارے میں یقین کیا جاتا ہے کہ ان خفیہ جاسوس طیاروں کو القاعدہ اور طالبان کے اراکین کو نشانہ بنانے کے لیے یمن، پاکستان اور دیگر مقامات پر استعمال کیا جارہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption میں ان (ڈرون طیاروں) سے بہت اچھی طرح واقف ہوں: پنیٹا

سِسلی میں فوجی اہلکاروں سے ملاقات کے دوران گلوبل ہاک کے سامنے کھڑے ہوکر انہوں نے لیبیا میں فوجی آپریشن کی نزاکت پر بات کی جس میں ڈرون طیارے بھی استعمال کیے جارہے ہیں اور کہا ’گلوبل ہاک کا استعمال جیسا کہ میرے پیچھے موجود ہے، اور ڈرون طیاروں کا استعمال، ان سے میں اپنے گزشتہ کام کے دوران سے ہی بہت اچھی طرح واقف ہوں۔‘

خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ابھی لیون پنیٹا ڈرون طیاروں کا ذکر کر ہی رہے تھے کہ ہوائی اڈے سے ایک ڈرون طیارے نے پرواز بھری۔

اے ایف پی کے بقول یہ پہلی بار نہیں کہ لیون پنیٹا نے ڈرون طیاروں کا ذکر کیا ہو بلکہ امریکی اہلکار پہلے بھی ڈھکے چھپے الفاظ میں اس بات کا ذکر کرتے رہے ہیں کہ القاعدہ کو کمزور کرنے کے لیے ڈرون طیاروں کا کردار ہے۔

لیون پنیٹا نے سی آئی اے کے ڈائریکٹر کی حیثیت سے ایک بار اشارۃً کہا تھا کہ القاعدہ کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانے کے لیے ڈرون سے حملے ہی اب کھیل کا حصہ ہیں۔

اسی بارے میں