سٹراس کان: فرانسیسی تحقیقات بند

ڈومنک سٹراس کان، فرانسیسی مصنفہ ٹرسٹین بینن تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مصنفہ ٹرسٹین بینن 2003 میں مسٹر کان پر جنسی زیادتی کرنے کا الزام لگایا تھا۔

عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف کے سابق سربراہ ڈومینک سٹراس کان کے خلاف جنسی زیادتی کی کوشش سے متعلق تحقیقات بند کر دی گئی۔

استغاثہ کا کہنا ہے کہ شہادتوں کے مطابق جنسی حملے کوشش کی گئی ہے جو جنسی زیادتی کے مقابلے چھوٹا جرم ہے۔

مصنفہ ٹرسٹین بینن نے 2003 میں مسٹر سٹراس کان پر جنسی زیادتی کی کوشش کرنے کا الزام عائد کیا تھا۔

استغاثہ کا کہنا ہے کہ یہ واضح ہے کہ’ کافی ثبوت نہ ملنے کے سبب جنسی زیادتی کی کوشش کا مقدمہ شروع نہیں کیا جا سکتا تاہم جنسی حملے کی بات ثابت ہوئی ہے‘۔

محترمہ بینن کے وکیل نے اس فیصلے کو کامیابی قرار دیتے ہوئے کہا کہ کم از کم یہ تو ثابت ہوا کہ ان کی موکل کا الزام خیالی نہیں تھا اور اب مسٹر کان کو اس فیصلے کے ساتھ جینا پڑے گا کہ وہ ایک ایسے ملزم ہیں جن پر فرانسیسی قانون کے تکنیکی پہلوؤں کے سبب مقدمہ نہیں چلایا جا سکا۔

ان کے یہ الزامات ایسے وقت میں سامنے آئے تھے جب مسٹر کان پر نیویارک میں ایک ہوٹل کی ملازمہ کے ساتھ جنسی زیادتی کرنے کا الزام لگا تھا تاہم بعد میں یہ کیس حتم ہو گیا تھا۔

اس الزامات کے بعد انہیں گرفتار کیا گيا تھا اور نیو یارک کی عدالت میں مقدمہ درج ہوا۔ عدالت کی طرف سے ریمانڈ پر بھیجنےکے بعد ڈومینک سٹراس کان نے آئی ایم ایف کے سربراہ کے عہدے سے استعفی دے دیا تھا۔

آئی ایم ایف کے سابق سربراہ پر مجرمانہ جنسی حملے، جنسی زیادتی کی کوشش اور حبسِ بے جا میں رکھنے کے الزامات کے تحت فردِ جرم عائد کی گئی تھی۔

باسٹھ سالہ سٹراس فرانس کےسابق وزیرِ خزانہ ڈومینیک سٹراس کان نے ہوٹل کی ملازمہ پر جنسی حملہ کرنے کے الزام کی تردید کی تھی۔

ڈومینیک سٹراس کان فرانس کے ممتاز سوشلسٹ سیاست دان بھی ہیں جنہیں اس واقعے سے قبل ملک کی صدارت کے لیے ایک ممکنہ امیدوار کے طور پر دیکھا جا رہا تھا۔

اسی بارے میں