یمن مظاہرے: بارہ ہلاک 80 زخمی

یمن میں صدر صالح عبداللہ کے خلاف ہونے والے مظاہروں میں سکیورٹی فورسز نے کم از کم 12 لوگوں کو گولی مار کر ہلاک اور 80 کو زخمی کر دیا ہے۔

سٹی سینٹر تک مارچ کرنے والے ہزاروں مظاہرین پرگولیاں چلائی گئیں اور اشک آور گیس کا استعمال کیا گیا۔

صدر صالح گزشتہ آٹھ ماہ سے جاری ان مظاہروں کا مقابلہ کر رہے ہیں۔

ثناء میں عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ مظاہرین صدر صالح کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے اس علاقے کی سمت جا رہے تھے جو صدر صالح کی حامی فوج کے کنٹرول میں ہے۔

فائرنگ میں زخمی ہونے والوں کو ہسپتال پہنچا دیا گیا ہے۔

دوسرے ایک اور وقعہ میں یمن میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے جنوبی حصے میں ایک فضائی کارروائی کے دوران یمن میں شدت پسند تنظیم القاعدہ کے میڈیا چیف ہلاک ہوگئے ہیں۔

یمن کی وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ جمعہ کو علاقے صبحواہ میں ایک فضائی کارروائی کے دوران القاعدہ کے میڈیا چیف ابراہیم البنعا اور دیگر چھ شدت پسند ہلاک ہوگئے ہیں۔القاعدہ رہنما ابراہیم البنعا کا تعلق مصر سے ہے۔

اسی بارے میں