پاپا ڈیموس یونان کے وزیرِ اعظم نامزد

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption نئی حکومت جمعے کو گرینیج وقت کے مطابق دوپہر بارہ بجے حلف اٹھا لے گی

یورپ کے مرکزی بینک کے سابق نائب صدر لوکس پاپا ڈیموس کو یونان کا نیا وزیرِ اعظم نامزد کر دیا گیا ہے۔

چونسٹھ سالہ پاپا ڈیموس نے کہا ہے کہ وہ نازک وقت میں ملک کا نظام سنھبال رہے ہیں۔

ادھر یونان کی تین بڑی جماعتوں کے رہنما قومی حکومت کی تشکیل کے لیے صدر سے ملاقات کے بعد کسی معاہدے تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

نامہ نگاروں کے مطابق یونانی شہریوں کو امید ہے کہ نئی حکومت ملک کو بحران سے نکالنے میں کامیاب ہو جائے گی۔

مسٹر پاپا ڈیموس آئندہ انتخابات تک ایک عبوری قومی حکومت کی قیادت کریں گے جسے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے تشکیل دیا جارہا ہے کہ قرضوں کے بوجھ تلے دبا یونان یورپی یونین کے بیل آؤٹ پیکج کی اگلی قسط حاصل کرسکے اور یورو زون کے ملکوں اور عالمی مالیاتی فنڈ کے مشترکہ مجوزہ 177 ارب ڈالر کے بین الاقوامی امدادی پیکج کی منظوری دے سکے۔

یونان کے صدر کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق صدر نے سیاسی رہنماؤں کی سفارشات کے بعد لوکاس پاپا ڈیموس کو ہدایت کی ہے کہ نئی قومی حکومت تشکیل دیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ نئی حکومت جمعہ کو گرینیج وقت کے مطابق دوپہر بارہ بجے حلف اٹھا لے گی۔

اس اعلان کے بعد مسٹر پاپا ڈیموس کا کہنا تھا ’میرا کام آسان نہیں ہے تاہم مجھے امید ہے یونان کے مسائل بہت جلد اور بہتر طریقے سے حل ہو جائیں گے۔‘

انہوں نے کہا کہ ان کی پہلی ترجیح سرکاری اخراجات کو کم کرنے کے ان منصبوں پر عملدرآمد کرنا ہو گا جس کا یورپی یونین مطالبہ کر رہی ہے۔

مسٹر پاپاڈیموس مستعفی ہونے والے وزیرِ اعظم جارج پاپانڈریو کی جگہ لیں گے جنہیں یورو زون کے پیکج پر ریفرنڈم کروانے کے علان کے بعد اقتدار چھوڑنا پڑا تھا۔

یونان کے سرکاری ٹی وی کے مطابق نئے وزیر اعظم پارلیمان کے رکن نہیں تاہم انہیں اعتماد کا ووٹ لینا پڑے گا جس پر پیر کو رائے شماری ہو گی۔

اسی بارے میں