چین:اصلاحی ڈراموں میں اشتہارات پر پابندی

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اشتہارات بند کیے جانے سے چین میں ٹی وی سٹیشنوں کی آمدن میں بہت بڑی کمی آئے گی۔

چین میں ثقافتی سرگرمیوں کی اصلاح کے لیے ٹی وی ڈراموں کے دوران چلائے جانے والے اشتہارات پر اگلے سال سے پابندی عائد کی جا رہی ہے۔

چینی حکام کے مطابق یکم جنوری سنہ دو ہزار بارہ سے پینتالیس منٹ لمبے پروگراموں کے دوران اشتہارات نہیں چلائے جائیں گے۔

حکام کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ کمیونسٹ پارٹی کے ایک حالیہ اجلاس میں ہونے والے فیصلے کی روح کے مطابق ہے۔ اگرچہ پارٹی کے رہنماؤں نے بتایا کہ وہ اس فیصلے کے ذریعے ایک اشتراکی یا سوشلسٹ کلچر کو تشکیل دینا چاہتے ہیں لیکن انہوں نے سوشلسٹ کلچر کی تعریف نہیں کی ہے۔

تاہم اس فیصلے کے انجام سے ٹی وی سٹیشن خوب واقف ہیں اور اشتہارات بند کیے جانے سے ان سٹیشنوں کی آمدن میں بہت بڑی کمی آئے گی۔

اس بارے میں چین کے ایک ٹی وی سٹیشن کے ایگزیکٹو کا کہنا تھا ’اگر حکومت سب سے زیادہ دیکھے جانے والے پروگراموں کے دوران اشتہارات کے وقفے ختم کر دے گی تو اس سے تو ہمارا کام ختم ہو جائے گا۔‘

چین میں حنان سیٹ لائٹ ٹی وی کی ایک ترجمان نے بتایا کہ چینی حکومت نے یہ فیصلہ ایک ایسے وقت پر کیا ہے جب اگلے سال کے اشتہارات کے معاہدے پہلے ہی کیے جا چکے ہیں۔

انھوں نے کہا ’چین بھر میں ٹی وی سٹیشنوں کے بیشتر مالکان کی نیندیں اڑ جائیں گی۔‘

دوسری جانب چین کے سرکاری نشریاتی ادارے ’ایس اے آر ایف ٹی‘ کی ویب سائٹ پر درج ہے کہ ’ریڈیو اور ٹی وی عوام اور پارٹی کی آواز ہیں اور یہ تفاقتی سوچ کے پراپیگنڈے کا ایک اہم حصہ ہے۔‘

سرکاری نشریاتی ادارے کے ترجمان نے چینی خبر رساں ادارے زنوا کو بتایا ’اگر ایک طویل عرصے کے بارے میں سوچا جائے تو اس فیصلے سے ٹی وی ڈراموں کو سائنسی طرز سے بہتری کا موقع ملے گا۔‘

اسی بارے میں