’جنگی دورگزرگیا، دفاعی بجٹ میں کمی ہوگی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption جنگ کی لہر کم ہو رہی ہے اور یہ تبدیلی کا وقت ہے: اوباما

امریکی صدر براک اوباما نے فوج میں کمی کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ جنگ کا عشرہ گزر گیا ہے اور امریکہ کو معاشی ترقی پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

صدر براک ا وباما نے پینٹاگان میں فوج میں کمی کے منصوبے کا اعلان کرتےہوئے کہا کہ جنگ کی لہر اب اتر رہی ہے اور امریکہ کو اپنی معاشی طاقت کو بجال کرنا ہے۔

فوج میں کمی کے منصوبے کے تحت امریکہ اگلے دس سالوں میں چار سو پچاس ارب ڈالر بچائے گا۔ اس منصوبے کے تحت دسویں ہزار امریکی فوجیوں کی ملازمت ختم ہو جائے گی۔ امریکہ کا سالانہ دفاعی بجٹ دس کھرب ڈالر ہے۔

صدر اوباما نے ہتھیاروں یا فوجیوں میں کمی کے کسی واضح منصوبے کا اعلان نہیں کیا اور یہ منصبوے اگلے سال مالی بجٹ میں پیش کیے جائیں گے۔ توقع کی جا رہی ہے کہ اگلے سال کے مالی بجٹ میں فوجی بجٹ میں دس سے پندرہ فیصد کمی کا اعلان کیا جائے گا۔

مالی خسارے کو کم کرنے سے حوالے امریکی کانگریس کسی منصوبے پر متفق نہیں ہو سکی تھی اور امید کی جا رہے کہ اگلے مالی بجٹ میں دفاعی بجٹ میں سےپانچ سو ارب ڈالرکی کمی کر دی جائے گی۔

امریکی صدر براک اوباما نے کہا ’ہاں ہماری فوج دبلی ہو گی لیکن دنیا کو جان لینا چاہیے کہ امریکہ اپنی فوجی برتری کو برقرار رکھے گا۔‘

صدر اوباما نے کہا کہ امریکہ جنگی عشرے کا ورق الٹ رہا ہے اور یہ تبدیلی کا وقت ہے۔ صدر اوباما نے کہا باوجود اس کے کہ امریکی فوجی اب بھی افغانستان میں لڑائی لڑ رہے ہیں جنگ کی لہر کم ہو رہی ہے۔

صدر اوباما نے کہا دنیا میں امریکی طاقت کی بنیاد اس کی مضبوط معیشت ہے اسے بحال کرنا بہت ضروری ہے۔

صدر اوباما نے کہا کہ امریکہ بحرالکاہل میں اپنی طاقت میں اضافہ کرے گا۔

صدر اباما نے الیکشن کے سال میں اپنے حریفوں کی تنقید سے بچنے کے لیے کہا کہ اب بھی دفاعی بجٹ میں اضافہ ہو گا لیکن یہ اضافہ کم رفتار سے ہو گا۔

امریکی وزیر دفاع لیون پنیٹا نے کہا کہ فوج میں کمی کے منصوبے کے باوجود امریکی فوج ایک ہی وقت میں ایک سے زیادہ چلیجنوں سے نمٹنے کی صلاحیت برقرار رکھے گی۔

وزیر دفاع نے کہا کہ عراق میں جنگ کے خاتمے اور افغانستان میں فوجیوں کی کمی کی وجہ امریکہ کو اتنی بڑی فوج رکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔

اسی بارے میں