فیس بک’پبلک کمپنی‘ بن رہی ہے

فیس بک تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption فیس بک سب سے مقبول ترین سوشل نیٹورکنگ سائٹ ہے

سماجی رابطے کی ویب سائیٹ فیس بک اطلاعات کے مطابق اس ہفتے باضابطہ طور پر ایک پبلک کمپنی بننے کے عمل کا آغاز کر رہی ہے اور اسکی مالیت کا تخمینہ 75 سے 100 ارب ڈالر کے درمیان لگایا گیا ہے۔

فیس بک کی جانب سے مارکیٹ میں شیئرز لانے کی افواہیں پچھلے کئی مہینوں سے گرم تھیں لیکن اسکا یہی کہنا رہا تھا کہ وہ اس بارے میں کچھ نہیں کہے گی۔

فنانشیل ٹائمز اور وال اسٹریٹ جرنل کے مطابق فیس بک بدھ کو امریکی کمپنیوں کے نگراں ادارے میں کاغذات جمع کرانے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے۔

ان اخبارات کے مطابق فیس بک کے بطور پبلک کمپنی بننے کے بعد اسے شیئرز کی فروخت سے اس سال کے اختتام تک دس ارب ڈالر کا سرمایہ ملے گا جو کہ امریکہ کی تجارتی شہ رگ وال اسٹریٹ میں شیئرز کی اب تک کی سب سے بڑی فروخت میں سے ایک ہوگی اور اس لحاظ سے فیس بک، گوگل کو بھی پیچھے چھوڑ دے گی جسے 2004ء میں پبلک کمپنی بننے پر شیئرز کی فروخت سے ایک اعشاریہ نو ارب ڈالر کا سرمایہ ملا تھا۔

مگر اس معاملے میں فیس بک، پھر بھی کار بنانے والی کمپنی جنرل موٹرز سے پیچھے رہے گی جس نے نومبر 2010ء میں بیس ارب ڈالر کے شیئرز فروخت کیے تھے۔

فیس بک کی بطور پبلک کمپنی مالیت کا جو تخمینہ لگایا گیا ہے، اس کے نتیجے میں وہ مارکیٹ میں سرمایہ حاصل کرنے کے لحاظ سے دنیا کی سب سے بڑی کمپنیوں میں شامل ہوجائے گی۔

مارک زوکربرگ اور انکے ساتھی نے سنہ 2004 میں فیس بک کی شروعات کی تھی جو جلد ہی دنیا کی سب سے مقبول ترین سوشل نیٹ ورکنگ سائٹ بن گئی۔

اسی بارے میں