عراق: کار بم دھماکوں میں اڑتیس ہلاک

آخری وقت اشاعت:  منگل 20 مارچ 2012 ,‭ 12:34 GMT 17:34 PST

عراق میں سلسلہ وار بم دھماکے بغداد میں عرب لیگ کے اجلاس سے پہلے کیے گئے ہیں

عراق میں حکام کے مطابق بغداد، کربلا اور کرکوک میں ہونے والے کار بم دھماکوں میں کم از کم اڑتیس افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

کربلا میں ہونے والے دو بم دھماکوں میں کم از کم تیرہ افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ اس طرح کرکوک میں ہونے والے ایک کار بم دھماکے میں سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ حکام کے مطابق بغداد میں ہونے والے ایک دھماکے میں دو افراد ہلاک ہوئے ہیں۔کرکوک، کربلا اور بغداد کےعلاوہ بھی کئی قصبوں میں بم دھماکے ہوئے ہیں۔

بم دھماکے اایسے وقت ہوئے ہیں جب عراقی حکومت اگلے ہفتے بغداد میں ہونے والے عرب لیگ کے اجلاس کی تیاریوں میں مصروف ہے۔ عرب لیگ کے اجلاس سے پہلے بغداد میں سکیورٹی کے انتظامات انتہائی سخت کر دیئے گئے ہیں۔ بم دھماکے عراق پر امریکی حملے کے نو سال پورے ہونے پر ہوئے ہیں۔

بی بی سی کے نامہ نگار پیٹر بیلز کے مطابق عراق میں عام طور پر خیال کیا جاتا ہےکہ ان سلسلہ وار حملوں کا مقصد عرب لیگ کے اہم اجلاس سے پہلے عراقی حکومت کے اعتماد کومتزلزل کرنا ہے۔

حکام کے مطابق بغداد میں بم دھماکہ وزارت خارجہ کی عمارت کے باہر ہوا ہے۔ اس علاوہ ملک کے جنوبی قصبو،ں حلہ اور لطیفیہ میں بھی حملے ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔