ٹائٹینک کی صد سالہ برسی پر خصوصی سفر

بحری جہاز ٹائٹینک کے حادثے میں ہلاک ہونے والوں کے کچھ رشتے دار اس حادثے کی سو سالہ برسی کے موقع پر شمالی بحرِ اوقیانوس میں اسی مقام پر جائیں گے جہاں یہ جہاز ڈوبا تھا۔

ایم ایس بالمورال نامی جہاز اسی راہ پر سفر کرئے گا جس پر ٹائٹینک نے کیا تھا۔

ایم ایس بالمورال ٹائٹینک کی طرح ایک ہزار تین سو نو مسافر لے کر جائے گا اور حادثے کے مخصوص مقام پر ایک تقریب کا بھی انعقاد کیا گیا ہے۔

ٹائٹینک جہاز اپنے پہلے ہی سفر کے دوران پندرہ اپریل انیس سو بارہ کو ایک برفانی تودے سے ٹکرا کر ڈوب گیا تھا۔

کچھ مسافروں کا حادثے میں ہلاک ہونے والوں کی یاد میں پھولوں اور خاندانی نوادرات اور دیگر اشیاء لے جانے کا بھی ارادہ ہے۔

اس یادگار سفر میں بیس سے زیادہ ممالک سے تعلق رکھنے والے مسافر شریک ہیں جن میں حادثے سے بچ جانے والوں کے اہلِ خانہ، مصنفین، تاریخ دان اور ٹائٹینک کی کہانی میں دلچسپی رکھنے والے لوگ شامل ہیں۔

اس سفر کے دوران ٹائٹینک کے اصل مینیو سے کھانے کھلائے جائیں گے جبکہ ماہرین مسافروں کو اس کہانی کے مختلف حصوں سے متعارف کروائیں گے۔

اس سے پہلے اقوامِ متحدہ کے ثقافتی ادارے یونیسکو نے ٹائٹینک کے ملبے کو تحفظ دینے کا اعلان کیا تھا۔

ادارے کا کہنا تھا کہ اب تک سات سو سے زیادہ غوطہ غور کینیڈا کے ساحل کے قریب سمندر میں چار ہزار میٹر گہرائی میں موجود جہاز کے ملبے کا دورہ کر چکے ہیں اور وہ اپنے ساتھ ملبے میں موجود نوادرات بھی لے گئے ہیں۔

یونیسکو نے اسے دو ہزار ایک کے اس کنونشن کی فہرست میں شامل کر لیا ہے جو زیرآب ثقافتی ورثے کے تحفظ کے لیے بنایا گیا ہے۔

اسی بارے میں