یمن میں ریڈ کراس کے رکن اغواء

Image caption ریڈ کراس نے اپنے اغواء ہونے والے فرانسیسی کارکن کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے

یمن میں بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی کے ایک فرانسیسی رکن کو اغواء کرلیا گیا ہے۔

انہیں جہاں سے اغواء کیا گیا وہ حدیبہ کی بندرگاہ سے کوئی تیس کلومیٹر دور ہے۔ یہ اب تک واضح نہیں ہوسکا کہ ان کے اغواء کرنے والے کون افراد ہیں۔ یمن میں غیر ملکیوں کی اغواء کی وارداتیں کوئی نئی بات نہیں ہے۔

آئی سی آر سی نے کہا ہے کہ انہیں اغواء کاروں کی جانب سے اب تک کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے تاہم اس نے اپنے رکن کی فوری رہائی کی اپیل کی ہے۔

اطلاعات ہیں کہ ان کے ساتھ یمنی ڈرائیور کو کچھ ہی دیر بعد رہا کردیا گیا تھا۔

دارالحکومت صنعاء میں ریڈ کراس کا کہنا ہے کہ اغواء ہونے والے امدادی کارکن شمالی علاقے سعدا میں کام کررہے تھے۔

گزشتہ ہفتے القاعدہ نے اعلان کیا تھا کہ مارچ میں اغواء ہونے والے سعودی سفارتکار اُس کی تحویل میں ہیں۔

عدن میں تعینات ڈپٹی قونصل عبداللہ الخالدی کو ان کے گھر کے باہر سے اٹھائیس مارچ کو اغواء کیا گیا تھا۔ القاعدہ نے ان کی رہائی کے بدلے سعودی عرب میں قید شدت پسندوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

سوئٹزرلینڈ کی ایک خاتون شہری کو بھی مارچ میں حدیبہ سے اغواء کیا گیا تھا جو وہاں استانی کے طور پر اپنے فرائض انجام دے رہی تھیں۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق انہیں القاعدہ نے اغواء کرنے کے بعد صوبۂ شبوا میں مقید رکھا ہے۔

اسی بارے میں