نیٹو کی کارروائی میں آٹھ شہری ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ

افغانستان کے صوبہ پکتیا میں مقامی حکام کا کہنا ہے کہ نیٹو کے فضائی حملے میں ایک ہی خاندان کے آٹھ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

صوبے کے ترجمان کا کہنا ہے کہ سنیچر کو ضلع گردہ سیری کے گاؤں سوری خیل میں نیٹو کی فضائی کارروائی میں میاں بیوی اور ان کے چھ بچے ہلاک ہو گئے۔

افغانستان میں نیٹو کی سربراہی میں کام کرنے والی فوج کے ایک ترجمان نے کہا کہ علاقے میں فوج آپریشن میں مصروف تھی اور اس نے عسکریت پسندوں سے فائرنگ کے تبادلے کے بعد فضائی مدد طلب کی تھی۔

دریں اثناء نیٹو کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ افغانستان میں سڑک کنارے نصب بم دھماکوں کے مختلف واقعات میں اس کے چار فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔

نیٹو نے بیان میں صرف اتنا بتایا ہے کہ یہ واقعات سنیچر کو پیش آئے تاہم ہلاک ہونے والے فوجیوں کی شہریت اور نہ اس ضمن میں مزید تفصیل بتائی ہے۔

صوبہ پکتیا کے ترجمان نے روح اللہ سمون نے فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ’ فضائی کارروائی نیٹو نے کی تھی۔‘

انہوں نے کہا کہ’ہلاک ہونے شخص( بچوں کے باپ) کا تعلق طالبان یا کسی دوسری شدت پسند تنظیم سے نہیں تھا۔‘

خیال رہے کہ افغانستان میں نیٹو کی فضائی کارروائیوں میں عام شہریوں کی ہلاکت پر نہ صرف افغان صد حامد کرزئی متعدد بار شدید احتجاج کر چکے ہیں بلکہ ان ہلاکتوں کے خلاف کئی بار عوامی مظاہرے بھی ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں