برما: آنگ سانگ سوچی تھائی لینڈ کے دورے پر

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption وہ تھائی لینڈ میں ورلڈ اکنامک فورم میں شرکت کے لیے آئی ہیں

برما کی حزبِ اختلاف کی رہنما آنگ سانگ سوچی برما سے تھائی لینڈ ہجرت کرنے والے افراد سے تھائی لینڈ میں ملاقات کریں گی۔

آنگ سانگ سوچی کا گزشتہ دو دہائیوں میں کسی بھی ملک کا یہ پہلا دورہ ہے۔

برما کی حزبِ اختلاف کی رہنما سوچی منگل کی رات بینکاک پہنچیں جہاں ان کے مداحوں نے ان کا استقبال کیا۔

وہ تھائی لینڈ میں ورلڈ اکنامک فورم میں شرکت کے لیے آئی ہیں۔

واضح رہے کہ آنگ سانگ سوچی کو گزشتہ دو دہائیوں کے دوران ان کے گھر نظر بند رکھا گیا یا پھر انہیں اس بات کا خوف تھا کہ اگر وہ برما چھوڑ کر چلی گئیں تو انہیں واپس آنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

برما میں حالیہ اصلاحات کے بعد گزشتہ ماہ آنگ سانگ سوچی پارلیمان کی رکن منتخب ہوئی تھیں۔

برما کی نیشنل لیگ فار ڈیموکریسی جماعت کی سربراہ آنگ سانگ سوچی کو رواں ماہ کے شروع میں ان کا پاسپورٹ دیا گیا۔

بی بی سی کے نامہ نگار جان فشر کا کہنا ہے کہ سنہ انیس سو اٹھاسی کے بعد پہلی بار آنگ سانگ سوچی برما سے تھائی لینڈ ہجرت کرنے والے افراد کے ساتھ ملاقات کریں گی۔

ایک اندازے کے مطابق تھائی لینڈ میں ایک لاکھ تیس ہزار افراد کیمپوں میں رہائش پذیر ہیں، یہ افراد برمی حکام کے ظلم و ستم سے بچنے کے لیے وہاں سے بھاگ گئے تھے۔

آنگ سانگ سوچی کے بارے میں بتایا جا رہا ہے کہ وہ تھائی لینڈ کے وزیرِ اعظم سے جمعہ کو ملاقات کریں گی۔

تھائی لینڈ میں ورلڈ اکنامک فورم میں شرکت کے بعد آنگ سانگ سوچی برما واپس جائیں گی جس کے بعد وہ جون میں یورپ کا دورہ کریں گی۔

اسی بارے میں