تیس بچوں کے ساتھ زیادتی بائیس سال کی سزا

روچڈیل اور اولڈہم میں جنسی زیادتی اور ریپ کے لیے سزا پانے والے تصویر کے کاپی رائٹ press association
Image caption عدالت نے ان افراد کو ریپ اور کم عمر لڑکیوں کے ساتھ جنسی فعل کرنے کی سازش کرنے کے جرم میں سزا سنائی ہے۔

روچڈیل اور اولڈہم سیکس گروہ کے سرغنہ کو جو پہلے ہی جیل میں ہیں تیس بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے لیے مزید بائیس سال کی سزا سنائی گئی ہے۔

اولڈہم کے انسٹھ سالہ شبیر احمد ان نو افراد میں سے ایک ہیں جنہیں بچوں کے ساتھ جنسی جرائم کے لیے مئی میں لیور پول کراؤن کورٹ میں سزا سنائی گئی تھی۔

اس وقت شبیر احمد کا نام ظاہر نہیں کیا گیا تھا کیونکہ انہیں مزید الزامات کا سامنا تھا اور انہیں انیس برس کی سزا سنائی گئی تھی۔

شبیر احمد پر جون میں مانچیسٹر کی عدالت میں الزامات ثابت ہوئے تھے کہ انہوں نے ایک لڑکی کے ساتھ دس سال تک جنسی زیادتی کی۔ ان کی یہ نئی سزا پہلے سنائی جانے والے سزا کے ساتھ جاری رہے گی۔

جج مشتاق کھوکر کو سزا سنانے سے پہلے شبیر احمد کو مجبوراً کمرہ عدالت سے باہر نکالنا پڑا کیونکہ احمد مسلسل عدالت کی کارروائی میں رکاوٹ پیدا کر رہے تھے۔

جس وقت شبیر احمد کو وہاں سے لےجایا جا رہا تھا تو وہ زور زور سے کہہ رہے تھے ’یہ سب جھوٹ ہے‘۔

شبیر احمد نے وہاں موجود صحافیوں کی جانب دیکھتے ہوئے چینخ کر کہا ’تم کیا دیکھ رہے ہو‘۔

جیوری کو بتایا گیا کہ شبیر احمد نے جنسی زیادتی کی شکار اس لڑکی کو اپنی جائیداد کی طرح استعمال کیا اور لڑکی کے ساتھ دس سال تک تقریباً ہر ہفتے جنسی زیادتی کی گئی۔

احمد ان نو لوگوں میں شامل ہے جن پر ایک ریستوران کے ذریعے کم عمر کی لڑکیوں کو جنسی استحصال کا نشانہ بنانے کا جرم ثابت ہوا ہے۔

ان تمام افراد کا تعلق لیور پول کے علاقے روچڈیل اور اولڈہم سے ہے۔ جن اشخاص کو جیل کی سزا سنائی گئی تھی ان میں پچیس سالہ کبیر حسن، اکتالیس سالہ عبد العزیز، تینتالیس سالہ عبد الراؤف، بیالیس سالہ عادل خان، پینتالیس سالہ محمد امین، چوالیس سالہ عبد القیوم، پینتیس سالہ محمد ساجد اور بائیس سالہ حامد سفی شامل ہیں۔ عدالت نے حکم دیا کہ حامد سفی کو سزا کے خاتمے پر افغانستان بدر کر دیا جائے۔

عدالت نے ان افراد کو ریپ اور کم عمر لڑکیوں کے ساتھ جنسی فعل کرنے کی سازش کرنے کے جرم میں سزا سنائی ہے۔

لیور پول کی کراؤن کورٹ کو بتایا گیا تھا کہ یہ گروہ پانچ کم عمر لڑکیوں کو اپنے مقاصد کے لیے شراب اور منشیات مہیا کرتے تھے اور روچڈیل کے ہیوڈ علاقے میں واقع دو چھوٹے ریسٹورانٹ پر ان کے ساتھ جنسی عمل کیا جاتا تھا۔

اسی بارے میں