صحرائے سینا: سات شدت پسند ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption صحرائے سینا میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کے لیے مصری سکیورٹی فورسز کو بھیجا گیا ہے

مصر میں حکام کا کہنا ہے کہ صحرائے سینا میں سکیورٹی فورسز کی کارروائی میں سات مسلح شدت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔

امریکی خبر رساں ایجنسی اے پی کے مطابق مصری حکام کا کہنا ہے کہ سکیورٹی فورسز نے صحرائے سینا کے شمالی علاقے میں ال العریش شہر کے قریب ایک گاوں میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا۔

حکام کے مطابق اس کارروائی میں سات مسلح شدت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔

خیال رہے کہ اسرائیل اور غزہ کی پٹی کے ساتھ مصر کےسرحدی علاقے صحرائے سینا میں گزشتہ ہفتے شدت پسندوں نے مصری پولیس کی سرحدی چوکی پر حملہ کر کے سولہ پولیس اہلکاروں کو ہلاک کر دیا تھا۔

اس علاقے میں گزشتہ کئی سالوں کے دوران یہ سب سے پرتشدد واقعہ تھا۔

مصری حکومت نے علاقے میں موجود اسلامی شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کرنے کے لیے بڑی تعداد میں فوج، ٹینک اور بکتر بند گاڑیاں بھیجی ہیں۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ مصر میں گزشتہ سال صدر حسنی مبارک کے اقتدار سے الگ ہونے بعد صحرائے سینا میں سکیورٹی کی صورتحال ابتر ہوئی ہے جس کا اسلامی شدت پسندوں نے فائدہ اٹھایا۔

اس سے پہلے جمعہ کو صحرائے سینا کے مقامی بدو قبائلی سرداروں نے علاقے میں اسلامی شدت پسندوں کے خلاف حکومتی کارروائیوں کی حمایت کا اعلان کیا تھا۔

سینا میں مصری فوج کی تعداد کم ہے ۔ انیس سو اناسی کے معاہدے کے تحت مصر کو اس علاقے میں فوج بھیجنے کے لیے اسرائیل سے اجازت لینی پڑتی ہے۔ اسرائیل نے سینا کے علاقے پر قبضہ کرنے کے بعد مصر کو واپس کر دیا تھا۔

اسی بارے میں