’مصر امریکہ کا اتحادی ہے اور نہ ہی دشمن‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 14 ستمبر 2012 ,‭ 11:39 GMT 16:39 PST

امریکی صدر کا بیان مصر اور لیبیا میں امریکی سفارت خانوں پر حملے کے بعد آیا ہے

امریکی صدر براک اوباما نے کہا ہے کہ اس وقت امریکہ مصر کو ایک اتحادی کے طور پر نہیں دیکھتا ہے۔

اسلام مخالف فلم کے خلاف مظاہرے کے دوران قاہرہ میں امریکی سفارت خانے پر حملے کے تناظر میں امریکی صدر براک اوباما نے مصر اور امریکہ کے تعلقات کے بارے میں کہا کہ’ ابھی کام جاری ہے‘

’ میرا نہیں خیال کہ ہم اسے ایک اتحادی کے طور پر دیکھ سکتے ہیں لیکن ہم اسے دشمن کے طور پر بھی نہیں دیکھتے ہیں۔ وہاں ایک نئی حکومت آئی ہے اور وہ اپنا راستہ تلاش کرنے کی کوششوں میں ہے۔‘

ہسپانوی زبان کے ایک ٹی وی چینل ٹیلی منڈو کو انٹرویو دیتے ہوئے صدر اوباما نے کہا کہ ’مصری حکومت نے درست باتیں کیں اور ٹھیک اقدامات کیے لیکن اس کے ساتھ اس نے بعض ایسے معاملات پر اس طرح سے ردعمل ظاہر کیا جو ہمارے مفادات سے مطابقت نہیں رکھتا۔‘

صدر اوباما کے مطابق وہ امید کرتے ہیں کہ مصری حکومت امریکی سفارت خانے اور اس کے عملے کا تحفظ کرے گی۔

’ اگر وہ کارروائی کرتے، لیکن اشارہ یہ ملتا ہے کہ انہوں نے ذمہ داری سے ایسا نہیں کیا جیسا کے دنیا کے دیگر ممالک کرتے ہیں، جہاں پر امریکی سفارت خانے ہیں، میرے خیال میں یہ مسئلہ بننے جا رہا ہے۔‘

مصر سنہ 1979 میں اسرائیل کے ساتھ امن معاہدے کے بعد امریکہ کا قریبی اتحادی رہا ہے اور امریکہ مصر کو ہر سال ایک ارب ڈالر کی فوجی امداد دیتا ہے۔

گزشتہ سال مصر میں عوامی احتجاج کے بعد صدر حسنی مبارک کے اقتدار سے الگ ہونے کے بعد ایک وقت میں پابندی کا سامنا کرنے والی اسلامی جماعت اخوان المسلمین اقتدار میں آ گئی ہے۔ اس جماعت کے اقتدار میں آنے کے بعد سے دونوں ممالک کے تعلقات کے مستقبل کے حوالے سے سوالات اٹھائے جا رہے ہیں۔

دوسری جانب مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ میں امریکہ مخالف احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔