افغانستان: ہلمند صوبے کےگورنر کو برخاست کردیا گیا

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 20 ستمبر 2012 ,‭ 13:53 GMT 18:53 PST
گلاب منگل

گلاب منگل برطانوی حکومت کے قریب سمجھے جاتے ہیں

افغانستان کے صدر حامد کرزئی نے ہلمند صوبے کے گورنر گلاب منگل کو ان کے عہدے سے برخاست کردیا ہے۔

صدر کرزئی کا یہ قدم ملک میں جاری سیاسی تبدیلوں کا حصہ سمجھا جا رہا ہے۔

گلاب منگل کو برطانیہ کے اہم اتحادی کے طور پر جانا جاتا ہے اور وہ ان دس گورنروں میں شامل ہیں جن کو حال ہی میں یا تو ان کے عہدوں سے برخاست کیا گیا ہے یا پھر ان کو نئے عہدے دے دیے گئے ہیں۔

واضح رہے کہ ہلمند ایک بے حد حساس صوبہ ہے اور یہاں بیرونی افواج اور طالبان کو درمیان لڑائی جاری ہے۔

گلاب منگل نے ہلمند صوبے کا اقتدار ایک ایسے وقت میں سنبھالا تھا جب وہاں موجود نیٹو افواج طالبان جنگجوؤں کے خلاف لڑ رہی تھی۔

سیاسی ماہرین کا کہنا ہے کہ گلاب منگل کو برخاست کیا جانا ایک سیاسی قدم ہو سکتا ہے۔

کابل میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ اس سے قبل ماضی میں بھی صدر کرزئی کئی مرتبہ گلاب منگل کو ان کے عہدے سے ہٹانے کی کوشش کر چکے ہیں۔

اب گلاب منگل کے جگہ جنرل نعیم بلوچ صوبۂ ہلمند کے گورنر مقرر کیے جائیں گے۔ جنرل نعیم بلوچ افغانستان کی سرکاری خفیہ ایجنسی میں کام کرتے ہیں۔

افغانستان میں سنہ دو ہزار چودہ میں صدارتی انتخابات ہونے ہیں۔ اس وقت سیاسی انتظامیہ میں جو تبدیلیاں کی جا رہی ہیں وہ انتخابات سے پہلے کی سیاسی جوڑ توڑ کا حصہ ہے۔

واضح رہے کہ مسٹر گلاب منگل آئندہ انتخابات میں صدر کے عہدے کے اہم امیدوار قرار دیے جا رہے ہیں۔

کابل میں برطانوی سفارتخانے کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اپنے چار برس کے دورِ اقتدار میں گورنر گلاب منگل نے ’صوبۂ ہلمند کے عام شہریوں کی زندگی میں تبدیلی لانے کے لیے اہم کردار ادا کیا ہے۔‘

گلاب منگل ایک پشتون ہیں اور ان کا تعلق افغانستان کے جنوب مشرقی صوبہ پکتیکا سے ہے۔ گلاب منگل نے گورنر کی حیثیت سے نہ صرف طالبان جنگجوؤں بلکہ قبائلیوں کے مسائل اور افیون کے کاروبار سے متعلق مسائل سے نمٹنے کی کوشش کی ہے۔

گلاب منگل پر الزام ہے کہ انہوں نے صدر کی اجازت کے بغیر امریکہ کہ دورہ کیا۔ واضح رہے کہ افغانستان میں اگر گورنرز بیرونی ممالک جانا چاہتے ہیں تو اس کے لیے انہیں صدر کی اجازت کی ضرورت ہوتی ہے۔

حالانکہ مسٹر منگل نے ان الزامات سے انکار کیا اور ان کا کہنا ہے کہ کابل میں امریکی سفارتخانہ اور واشنٹگٹن میں افغانستان کا سفارتخانہ اس بات کی تصدیق کرسکتا ہے کہ وہ کبھی بھی صدر کی اجازت کے بغیر امریکہ نہیں گئے ہیں۔

گلاب منگل کو برخاست کیے جانے کے باقاعدہ اعلان سے پہلے انہوں نے بی بی سی کو بتایا کہ امریکہ اور برطانیہ کے دورے پر جانے سے پہلے انہوں نے گورنر کے دفتر سے اجازت لی تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔