مالی:’انسانی حقوق کی پامالیاں عروج پر‘

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 11 اکتوبر 2012 ,‭ 03:14 GMT 08:14 PST

اقوامِ متحدہ کے ایک اعلیٰ اہلکار کا کہنا ہے کہ افریقی ملک مالی کے ایک بڑے حصے پر قابض اور ملک میں شریعت نافذ کرنے کے لیے سرگرم اسلامی شدت پسند اغوا برائے تاوان اور منشیات کی سمگلنگ میں ملوث ہیں۔

اقوامِ متحدہ میں انسانی حقوق کے نائب سیکرٹری جنرل ایوان سیمونووِک نے کہا ہے کہ حقائق جاننے کے لیے مالی جانے والے ایک مشن کو معلوم ہوا ہے کہ اسلامی شدت پسند نوعمر بچوں کو اپنی فوج میں بھرتی کرنے کے لیے انہیں چھ سو ڈالر میں خرید رہے ہیں۔

مارچ میں ایک فوجی بغاوت کے بعد ملک میں بدامنی پھیل گئی تھی اور اسلامی شدت پسند مالی کے دو تہائی حصے پر قابض ہو گئے۔

ایوان سیمونووِک نے مالی میں انسانی حقوق کی صورتحال کی انتہائی تشویش ناک منظر کشی کی۔

سیمونووِک نے کہا کہ مالی میں خواتین کی حقوق خاص طور پر محدود کر دیے گئے ہیں۔ انہوں نے ایسی غیر شادی شدہ خواتین کی فہرست بیان کی جو یا تو حاملہ ہیں یا ناجائز بچے پیدا کر چکی ہیں۔

ایوان سیمونووِک نے مزید بتایا کہ ’کئی خواتین کو زبردستی شادی پر مجبور کیا گیا جنہیں محض ایک ہزار ڈالر میں خریدا جاتا۔ کئی کو تو دوبارہ بیچ دیا جاتا اور یہ سب در پردہ جبری جسم فروشی ہی ہے۔‘

اب تک تین لوگوں کو سرِ عام پھانسی دی گئی، آٹھ کے جسم کے اعضاء کاٹ دیے گئے اور دو کو کوڑے مارے گئے ہیں۔

انہوں نے نیویارک میں اقوامِ متحدہ کے ہیڈ کوارٹر میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ شدت پسند شریعت کی سخت ترین قسم کا نفاذ چاہتے ہیں۔ بقول ان کے مالی میں ’انسانی حقوق کی پامالی اب منظم طریقے سے ہو رہی ہے۔‘

حقائق جاننے کے لیے مالی جانے والے اقوامِ متحدہ کے مشن نے شمالی مالی جانے اور وہاں سے آنے والوں سے یہ معلومات اکٹھی کی ہیں۔ ایوان سیمونووِک کے بقول ان علاقوں میں شدت پسند جرائم کے لیے انتہائی سخت سزائیں سناتے ہیں۔

اب تک تین لوگوں کو سرِ عام پھانسی دی گئی، آٹھ کے جسم کے اعضاء کاٹ دیے گئے اور دو کو کوڑے مارے گئے ہیں۔

جنوبی مالی میں بھی تشدد اور قید خانوں میں غیر انسانی صورتحال کے الزامات سامنے آئے ہیں جہاں ابھی حکومتی کنٹرول باقی ہے۔

ایوان سیمونووِک نے حکام سے کہا کہ اگر وہ اقوامِ متحدے سے مدد کے خواہش مند ہیں تو وہ ان واقعات کی تحقیقات کریں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔