اسرائیل اور حماس کے درمیان غیر سرکاری جنگ بندی

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 25 اکتوبر 2012 ,‭ 06:28 GMT 11:28 PST

حماس ذرائع کا کہنا تھا کہ تنظیم اس موقع پر لڑائی جاری نہیں رکھنا چاہتی تھی جبکہ علاقے میں لوگ عید کی تیاریوں میں مصروف ہیں

اطلاعات کے مطابق اسرائیل اور غزہ میں بر سرِ اقتدار فلسطینی تنظیم حماس کے درمیان، کئی روز کی جھڑپوں کے بعد، ایک غیر سرکاری نوعیت کا جنگ بندی کا معاہدہ طے پا گیا ہے۔

غزہ سے بی بی سی کے نمائندے جان ڈونیسن کا کہنا ہے کہ یہ معاہدہ مصر کی مدد سے طے پایا ہے تاہم اس کی شرائط یا مدّت کے بارے میں کچھ ظاہر نہیں کیا گیا ہے۔

پیر کے روز شروع ہونے والے راکٹ حملوں میں اسرائیل میں پانچ جبکہ غزہ میں چھ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

حملوں کے پیشِ نظر دونوں طرف سکولوں کو بند کر دیا گیا تھا۔

حماس ذرائع کا کہنا تھا کہ تنظیم اس موقعے پر لڑائی جاری نہیں رکھنا چاہتی، جب علاقے میں لوگ عید کی تیاریوں میں مصروف ہیں۔

اس سے پہلے اسرائیلی وزیرِ اعظم بنیامِن نیتنیاہو نے اسرائیل میں راکٹ داغنے والے مسلح افراد کے خلاف حملے جاری رکھنے کا وعدہ کیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم نے یہ کشتدگی شروع نہیں کی اور اگر یہ جاری رہی تو ہم اس سے بڑی جوابی کارروائی کریں گے۔

اسرائیلی فوج کے مطابق بدھ کے روز جنوبی اسرائیل میں ستر راکٹ داغے گئے جن سے پانچ افراد ہلاک جبکہ دو شدید زخمی ہوئے۔ اس کے جواب میں اسرائیلی جنگی طیاروں اور ٹینکوں نے شمالی غزہ میں حملے کیے۔

حماس کے عسکری ونگ نے اس بات کی تصدیق کی کہ انھوں نے اسرائیلی حدود میں راکٹ اور مارٹر حملے کیے۔ ایک بیان میں ان کا کہنا تھا کہ ’یہ مقدس مشن دشمن کی ہمارے لوگوں کے خلاف متواتر اور بارہا جرائم کا جواب ہے۔‘

یہ کشیدگی ایک ایسے وقت پر شروع ہوئی ہے جب یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ کیتھرین ایشٹن مشرقِ وسطیٰ میں امن کوششوں کے سلسلے میں خطے کا دورہ کر رہی ہیں۔

کیتھرین ایشٹن اسرائیلی صدر شامون پریز اور وزیرِاعظم نیتنیاہو سے ملاقاتوں کا ارادہ رکھتی ہیں جبکہ بدھ کے روز ان کی اسرائیلی وزیرِ دفاع عیہود باراک سے ملاقات وزیرِ دفاع کے غزہ کے سرحدی علاقوں کے دورے کے پیشِ نظر منسوخ کر دی گئی تھی۔

جمعرات کے روز کیتھرین ایشٹن فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس اور ان کے وزیرِ اعظم سلام فیاد سے ملاقاتیں کریں گی۔

یورپی یبنین کی نمائندہ کا کہنا تھا کہ مشرقِ وسطیٰ کے لیے یہ انتہائی اہم وقت ہے۔

ہمارے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ غزہ میں بر سرِ اقتدار حماس امن کوششوں کا حصہ نہیں اور ان کوششوں میں براہِ راست امریکی مداخلت دو سال قبل مذاکرات کی ناکامی کے بعد سے کم ہی رہی ہے۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔