اسرائیل اور حماس کے مابین جنگ بندی ختم

آخری وقت اشاعت:  منگل 30 اکتوبر 2012 ,‭ 02:34 GMT 07:34 PST

غزہ میں جنگ بندی کا معاہدہ چند روز ہی برقرار رہ سکا ہے

اسرائیلی حکام کا کہنا ہے کہ غزہ میں موجود عسکریت پسندوں نے اسرائیل میں چھبیس راکٹ داغے ہیں جس کے بعد حماس اور اسرائیل کے درمیان حال ہی میں طے پانے والا غیر سرکاری جنگ بندی کا معاہدہ ختم ہو گیا ہے۔

ان حملوں میں کسی جانی نقصان کی اطلاعات موصول نہیں ہوئیں۔

ان حملوں سے چند ہی گھنٹے پہلے اسرائیلی جنگی طیاروں نے غزہ میں مختلف مقامات کو نشانہ بنایا تھا۔ اس کارروائی سے پہلے اسرائیل نے غزہ کے ایک شہری کو مبینہ طور پر مارٹر گولوں سے فوجیوں پر حملہ کرنے کے الزام میں ہلاک کر دیا تھا جس کے بعد مسلح افراد نے اسرائیلی حدود میں راکٹ حملے کیے۔

مصر کی مدد سے جمعرات کے روز اسرائیل اور غزہ میں بر سرِ اقتدار فلسطینی تنظیم حماس کے درمیان، کئی روز کی جھڑپوں کے بعد، ایک غیر سرکاری نوعیت کا جنگ بندی کا معاہدہ طے پا گیا تھا جس کے بعد لڑائی میں کمی دیکھی گئی تھی۔

اس معاہدے کی شرائط یا مدّت کے بارے میں کچھ ظاہر نہیں کیا گیا تھا۔

گذشتہ ہفتے غزہ پر اسرائیل کے ہوائی حملوں میں چھ عسکریت پسند ہلاک ہو گئے تھے۔ چار اسرائیلی شہری اور ایک فوجی غزہ کی سرحد پر ایک سڑک کنارے نصب بم حملے میں شدید زخمی ہوگئے تھے۔

اسرائیل کا کہنا ہے کہ اتوار کے روز سات راکٹ داغے گئے۔ اتوار کے روز جنوبی قصبے خان یونس پر ہونے والے ہوائی حملے میں ہلاک ہوئے عسکریت پسند کا تعلق حماس کے مسلح ونگ ازدین القاسم بریگیڈ سے تھا۔

اسرائیل پر ہونے والے راکٹ حملوں میں حماس کے عسکریت پسند ملوث رہے ہیں جن میں سے بیشتر تنظیم کے چھوٹے چھوٹے دھڑوں نے کیے ہیں۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ وہ تمام راکٹ حملوں کا ذمہ دار حماس کو ٹھراتے ہیں۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔