نیل ہے وڈ: برطانوی صنعت کار یا جاسوس؟

آخری وقت اشاعت:  منگل 6 نومبر 2012 ,‭ 13:19 GMT 18:19 PST
نیل ہے وڈ

نیل ہے وڈ کے معاملے کے بارے میں برطانوی حکومت نے کچھ بھی کہنے سے انکار کردیا ہے

وال سٹریٹ جنرل نیوز پیپر کا کہنا ہے کہ چین میں ہلاک ہونے والے برطانوی صنعت کار نیل ہے وڈ اصل میں ایک برطانوی خفیہ ایجنٹ یا جسوس تھے۔

اخبار کے مطابق مرنے سے ایک برس پہلے تک نیل ہے وڈ چینی سیاست دان بو ذل‏عی کے بارے میں برطانوی خفیہ ایجنسی ایم 16 سے رابطے میں تھے۔

حالانکہ برطانوی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ وہ ’خفیہ معاملات‘ کے بارے میں کچھ نہیں کہے گی۔

واضح رہے کہ اپریل کے مہینے میں برطانوی وزیرخارجہ ولیم ہیگ نے کہا تھا کہ مسٹر ہے وڈ کسی بھی 'اعتبار' سے سرکاری ملازم نہیں تھے۔

نیل ہے وڈ کا معاملہ چین میں کئی عشروں میں ہونے والا سب سے بڑا سیاسی سکینڈل ہے۔

سنہ دوہزار گیارہ نومبر میں نیل ہے وڈ کی ہلاکت کے بعد بیجنگ میں کمیونسٹ پارٹی کے اہم رہنما اور ایک وقت میں ملک کے وزیر اعظم کے عہدے کے اہم دعویدار بو ژیلائی کو اپنا عہدہ چھوڑنا پڑا تھا۔

مسٹر بو کی اہلیہ کو نیل ہے وڈ کے قتل کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔ اس کے علاوہ سابق پولیس سربراہ کو بھی اس قتل کے معاملے میں گرفتار کیا گیا تھا۔

اس برس ستمبر کے مہینے میں مسٹر بو کو پارلیمان سے برطرف کردیا گیا تھا اور انہیں مقدمے سے جو استثنا حاصل تھا اس سے بھی محروم کردیا گیا تھا۔ اطلاعات کے مطابق مستقبل میں ان پر بھی مقدمہ چلایا جاسکتا ہے کیونکہ ان پراختیارات کے غلط استمعال، رشوت خوری اور پارٹی قوانین کی خلاف ورزی کے الزامات ہیں۔

بیجنگ میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار ڈیمئن گرامیٹکس کا کہنا ہے کہ مسٹر ہے وڈ کی ہلاکت نے چین میں سیاسی سیکنڈل کھڑا کردیا ہے اور ایسے دعوے کیے جارہے ہیں کہ وہ ایک برطانوی ایجنٹ تھے۔

وال سٹریٹ جنرل نے ایک نامعلوم برطانوی اہلکار کے حوالے سے بتایا ہے کہ نیل ہے وڈ ایم 16 کے ملازم نہیں تھے لیکن وہ ادارے کو بعض خفیہ اطلاعات فراہم کرتے تھے۔

حالانکہ نیل ہے وڈ کے رشتہ داروں نے اس بارے میں کچھ بھی کہنے سے انکار کیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔