اوباما کا فتح کا پیغام، ٹوئٹر پر ریکارڈ قائم

آخری وقت اشاعت:  بدھ 7 نومبر 2012 ,‭ 17:14 GMT 22:14 PST

یہ الفاظ ’مزید چار سال‘ اور براک اوباما اور ان کی اہلیہ مِشل اوباما کی وہ تصویر جس میں وہ گلے مل رہے ہیں، ٹوئٹر پر سب سے زیادہ ٹوئٹ ہونے والی پوسٹ بن گئی ہے۔

امریکی صدر نے یہ پیغام جی ایم ٹی کے معیاری وقت کے مطابق صبح چار بج کر سولہ منٹ پر ٹوئٹ کیا اور یہ اب تک پانچ لاکھ سے زائد مرتبہ ری ٹوئٹ کیا جا چکا ہے۔

اس سے اس بات کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ ووٹروں کو معلومات فراہم کرنے اور اپنے حمایتیوں سے ووٹ کی اپیل کے لیے سوشل میڈیا کا کردار کتنا اہم ہوگیا ہے۔

جیسے ہی براک اوباما کے دوبارہ منتخب ہونے کی خبر بریک ہوئی تو اس سے متعلق کلِک ہر منٹ پر 327,452 ٹوئٹس پوسٹ کیے گئے۔

اوباما اور ان کی اہلیہ کی یہ تصویر کلِک فیس بک پر بھی اپ لوڈ کی گئی جہاں اس نے سب سے زیادہ ’لائق‘ (یعنی پسندیدہ) حاصل کرنے کے ریکارڈ توڑ دیے۔

انتخابی مہم کے دوران دونوں امیدواروں نے سوشل نیٹ ورکنگ پر مہم پر کافی سرمایہ کاری کی۔

انتخابی نتائج کی رات کو براک اوباما کی تقریر سے پہلے ہی ڈیموکریٹ جماعت نے ای میل اور ٹوئٹر کے ذریعے فتح کا اعلان کیا۔

دوسرے ممالک کے سربراہان جیسا کہ برطانیہ کے وزیر اعظم ڈیوڈ کیمروں نے سوشل میڈیا سروس کے ذریعے مبارک باد دی۔

انہوں نے کہا ’میرے دوست براک اوباما کو مبارک ہو، ہم ساتھ مل کر کام جاری رکھیں گے‘۔ ڈیوڈ کیمرون کا یہ پیغام 1,500 مرتبہ ری ٹوئٹ کیا گیا۔

جس وقت یہ مضمون لکھا جا رہا تھا اس وقت تک ریپبلکن جماعت کے امیدوار مٹ رومنی کی جانب سے نتائج سامنے آنے کے بعد کوئی ٹوئٹ سامنے نہیں آیا۔ اس سے قبل انہوں نے ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کہا تھا کہ ’آپ کی مدد سے ہم اس ملک کا رخ موڑ دیں گے اور امریکہ کو پھر سے خوشحالی کی راہ پر لے جائیں گے‘۔

مٹ رومنی اور براک اوباما کی جانب سے انتخابی مہم پر خرچ ہونے والے دو بلین ڈالرز (1.2 بلین برطانوی پاؤنڈ) میں سے زیادہ ٹی وی پر اشتہارات اور مختلف پروگراموں پر خرچ ہوئے۔ لیکن انٹرنیٹ کو مہم کے دوران بہت اہمیت حاصل رہی خاص طور پر نوجوان ووٹروں کی حمایت حاصل کرنے کے لیے۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔