چار دن کا ہفتہ اور چھٹی جمعے کو

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 1 فروری 2013 ,‭ 14:42 GMT 19:42 PST

مغربی افریقہ کے ملک گیمبیا نے سرکاری دفاتر میں کام کرنے والے کارکنوں کے لیے چار دن پر مشتمل ہفتے کا اعلان کیا ہے جس میں جمعے کو ایک اضافی چھٹی ہوگی۔

گیمبیا کے صدر یحییٰ جامع نے کہا ہے کہ چھوٹے ہفتے سے گیمبیا کی اکثریتی مسلمان آبادی کو عبادت، سماجی کاموں اور کھیتوں میں کام کرنے کے لیے زیادہ وقت ملے گا۔

صدر جامع جنہوں نے انیس سو چرانوے میں ایک بغاوت کے نتیجے میں اقتدار پر قبضہ کیا تھا اپنے انوکھے طرز عمل کی وجہ سے مشہور ہیں۔

ان کے ناقدین کا کہا ہے کہ اس اقدام سے ملک میں کاہلی بڑھے گی اور اس غریب مغربی افریقی ملک کی معیشت کو نقصان پہنچے گا۔

گیمبیا کی معیشت میں زراعت خاص طور پر مونگ پھلی کی برآمدات ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے جبکہ ملک اپنے ساحل سمندر کی وجہ سے سیاحوں میں بھی بے حد مقبول ہے۔

گیمبیا کے اکثریتی مسلمان آبادی جو کہ اٹھارہ لاکھ کے لگ بھگ ہے جن کے لیے جمعے کا دن عبادت کے لیے اہم دن ہے۔

"گیمبینز کو زیادہ وقت عبادت، سماجی رابطوں اور زارعت پر صرف کرنے کے لیے زیادہ وقت ملے گا۔ جس سے لوگ زمین پر جائیں گے اور جو ہم کھاتے ہیں اسے اگائیں گے جس سے ہم ایک صحت مند اور خوشحال قوم بنیں گے۔"

صدر یحییٰ جامع کے دفر کا بیان

جمعرات اور جمعہ یا جمعہ اور ہفتہ اکثر مسلمان ممالک میں چھٹی کا دن ہوتا ہے مگر بعض کا کہنا ہے کہ اس سے مغربی ممالک سے تعلقات پر اثر پڑتا ہے اور کام میں خلل آتا ہے جہاں ہفتہ اور اتوار چھٹی کا دن ہوتا ہے۔

گزشتہ ماہ صدر جامع کے دفتر سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا تھا کہ یکم فروری سے پبلک سیکٹر میں کام کے لیے سوموار سے جمعرات کے دن ہوں گے اور صبح آٹھ سے شام چھ بجے کام کے اوقات ہوں گے۔

اس بیان میں کہاگیا ہے کہ اس نئے انتظام سے ’گیمبینز کو زیادہ وقت عبادت، سماجی رابطوں اور زارعت پر صرف کرنے کے لیے زیادہ وقت ملے گا۔ جس سے لوگ زمین پر جائیں گے اور جو ہم کھاتے ہیں اسے اگائیں گے جس سے ہم ایک صحت مند اور خوشحال قوم بنیں گے۔‘

اس بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ سرکاری سکول بھی جمعے کو بند رہیں گے مگر انہیں اجازت ہو گی کہ وہ جمعے کے بدلے ہفتے کو سکول کھول لیں تاکہ ایک چھٹی کا ازالہ ہو سکے۔

اب تک سرکاری ملازمین پانچ روزہ ہفتے کے نظام پر عمل کرتے تھے جس کے تحت صبح آٹھ سے سہ پہر چار بجے تک لوگ کام کرتے تھے۔

اس تبدیلی کے بعد اب بھی لوگ چالیس گھنٹے تک کام کریں گے مگر ناقدیں کا کہنا ہے کہ یہ ایک خلل انگیز اقدام ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ غیر سرکاری شعبہ جمعے کو بھی کام کرے گا مگر فرق صرف یہ ہو گا کہ وہ اس دن سرکار کے ساتھ کوئی کام نہیں کر پائیں گے۔

دو ہزار سات میں صدر جامع نے اعلان کیا تھا کہ وہ خفیہ جڑی بوٹیوں کے ساتھ ایڈز کا علاج صرف تین روز میں کر سکتے ہیں۔

اس اعلان پر دنیا بھر کے طبی ماہرین نے شدید تنقید کی تھی۔

صدر جامع پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا الزام عائد ہوتا ہے۔

گزشتہ سال نو سزائے موت یافتہ افراد کو ایک فائرنگ سکواڈ نے گولیاں مار کر ہلاک کر دیا تھا جبکہ صدر جامع کا کہنا تھا کہ وہ تمام سزائے موت یافتہ افراد کو ہفتوں میں ختم کر دیں مگر عالمی برادی کے شدید دباؤ کے بعد انہوں نے سینتیس پھانسیوں کے احکامات معطل کر دیے تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔