پوپ بینیڈکٹ: مستعفی ہونے کا فیصلہ

آخری وقت اشاعت:  پير 11 فروری 2013 ,‭ 11:41 GMT 16:41 PST

پوپ کا عہدہ تاحیات ہوتا ہے اور جدید دور میں کسی پوپ کے مستعفی ہونے کی مثال نہیں ملتی

ویٹیکن نے تصدیق کی ہے کہ پوپ بینڈکٹ شانزدہم 28 فروری کو مستعفی ہو رہے ہیں۔

85 سالہ پوپ اپریل 2005 میں پوپ جان پال دوم کے انتقال کے بعد پوپ بنے تھے۔

چھ سو سال کے عرصے میں وہ پہلے پوپ ہیں جنھوں نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دیا ہے، جس سے نہ صرف مختلف ملکوں کی حکومتیں، ویٹیکن پر نظر رکھنے والے مبصر، حتیٰ کہ ان کے قریبی مشیر تک حیران رہ گئے ہیں۔ عام طور پر پوپ کا عہدہ تاحیات ہوتا ہے۔

ویٹیکن کا کہنا ہے کہ نئے پوپ کا انتخاب ایسٹر سے پہلے کر دیا جائے گا۔

روم میں بی بی سی کے ایلن جانسٹن یہ خبر بے حد حیرت انگیز تھی، اور حالیہ دنوں میں اس بارے میں کوئی قیاس آرائیاں بھی نہیں تھیں۔

بی بی سی ہی کے ڈیوڈ وِلی نے روم ہی سے اطلاع دی ہے کہ اگرچہ یہ بات ایک صدمے کے طور پر آئی ہے، لیکن تکنیکی طور پر کوئی ایسا اصول نہیں ہے جو کسی پوپ کے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے سے روک سکے۔

روایتی طور پر ایسے استعفے کی شرائط صرف یہ ہیں کہ اسے آزادنہ طور پر دیا جائے اور اسے مناسب طور شائع کیا جائے۔

اٹلی کے صدر ماریو مونٹی نے کہا ہے کہ انھیں اس ’غیر متوقع خبر سے شدید صدمہ پہنچا ہے۔‘

ویٹیکن کے ایک ترجمان فادر فیڈریکو لومبارڈی نے کہا کہ اگرچہ پوپ کے قریبی مشیروں تک کو یہ معلوم نہیں تھا کہ وہ مستعفی ہونا چاہتے ہیں اور انھیں اس بات کا یقین نہیں آ رہا تھا۔ انھوں نے مزید کہا کہ اس فیصلے سے پوپ کی ہمت اور عزم کا اندازہ ہوتا ہے۔

تاہم پوپ کے بھائی نے کہا کہ پوپ کو ان کے ڈاکٹر نے طویل فضائی سفر سے منع کیا تھا، اور وہ کئی مہینوں سے مستعفی ہونے کے بارے میں سوچ رہے تھے۔

جرمنی میں اپنے گھر سے بات کرتے ہوئے جارگ ریٹزنگر نے کہا کہ ان کے بھائی کو چلنے میں دشواری ہوتی تھی، اور ان کا استعفیٰ ’قدرتی عمل کا حصہ ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا، ’ان کی عمر ان پر بوجھ بنتی جا رہی تھی۔ اس عمر میں میرے بھائی کو زیادہ آرام چاہتے ہیں۔‘

"میرے بڑھاپے کی وجہ سے میری جسمانی طاقت اس عہدے کے ضروریات ادا کرنے کے لیے ناکافی ہے۔"

پوپ بینیڈکٹ

2005 میں جب سابق کارڈینل جوزف ریٹزنگر پوپ بنے تھے وہ اس وقت وہ پوپ بننے والے معمر ترین افراد میں شامل ہو گئے تھے۔

جب انھوں نے اپنا عہدہ سنبھالا تو اس وقت کیتھولک چرچ ایک بہت بڑے بحران سے گزر رہا تھا۔ اسی دوران یہ خبریں آنا شروع ہوئی تھیں کہ پادری بچوں کو زیادتی کا نشانہ بناتے رہے ہیں۔

پوپ نے ایک بیان میں کہا: ’خدا کے سامنے اپنے ضمیر کا بار بار جائزہ لینے کے بعد مجھے یقین ہو گیا ہے کہ میرے بڑھاپے کی وجہ سے میری جسمانی طاقت اس عہدے کے ضروریات ادا کرنے کے لیے ناکافی ہے۔‘

بیان میں مزید کہا گیا ہے، ’آج کی دنیا، جو برق رفتار تبدیلیوں اور ایمان کی زندگی کے بارے میں گہرے سوالات کی وجہ سے تلاطم کا شکار ہے، اس میں سینٹ پیٹر کا عہدہ سنبھالنے اور خدا کا پیغام پھیلانے کے لیے ذہنی اور جسمانی طاقت کی ضرورت ہے، جب کہ گذشتہ چند ماہ میں اس میں اس حد تک کمی آئی ہے کہ مجھے اپنی ذمے داریاں نہ نبھا پانے کی کمزوری کا اعتراف کرنے پر مجبور ہونا پڑا ہے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔