’شامی سفارت خانہ اپوزیشن کو منتقل کرنے کا فیصلہ‘

آخری وقت اشاعت:  بدھ 13 فروری 2013 ,‭ 14:42 GMT 19:42 PST

اطلاعات کے مطابق خلیجی ریاست قطر نے دارالحکومت دوحہ میں قائم شامی سفارت خانے کو شام کی حزبِ اختلاف کو منتقل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس بات کا اعلان شامی قومی کونسل نے بدھ کو کیا۔

خیال رہے کہ قطر خلیجی ریاستوں میں سے پہلی ریاست ہے جو شامی قومی کونسل کو شامی افراد کا نمائندہ تسلیم کرتی ہے۔

شامی قومی کونسل کے مطابق شامی حزب مخالف کا جھنڈا قطر کے دارالحکومت دوحہ میں لہرائے گا اور وہاں نئے سفیر کے علاوہ دو مزید افراد کو تعینات کیا جائے گا۔

بیروت میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار جم میور کے مطابق شامی قومی کونسل نے برطانیہ اور فرانس کے علاوہ ان ممالک میں بھی اپنے سفیر تعینات کیے ہوئے ہیں جنہوں نے اسے تسلیم کر رکھا ہے۔

ادھر اقوام متحدہ کے ایک سینئیر اہلکار کا کہنا ہے کہ شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف شروع ہونے والی تحریک میں اب تک ستر ہزار کے قریب افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

دوسری جانب اقوامِ متحدہ میں انسانی حقوق کے ادارے کی سربراہ نوی پلے کا کہنا ہے کہ شام میں ایک اندازے کے مطابق کم سے کم ساٹھ ہزار ہلاک ہوئے ہیں۔

اس سے پہلے رواں ہفتے کے شروع میں شام کے باغیوں نے ملک کے شمال میں واقع شہر حلب میں قائم ایک فوجی ہوائی اڈے پر قبضہ کر لیا تھا۔

شامی جنگجوؤں نے سکیورٹی افواج کے ساتھ تین دن کی جھڑپوں کے بعد الجراع نامی ہوائی اڈے کا کنٹرول سنبھالا تھا۔

شامی باغیوں نے گذشتہ ماہ شدید لڑائی کے بعد ملک کے شمال مغرب میں واقع تفتاناز نامی فوجی ہوائی اڈے پر قبضہ کر لیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔