’مالی میں فرانسیسی کارروائی آخری مراحل میں‘

آخری وقت اشاعت:  اتوار 24 فروری 2013 ,‭ 01:42 GMT 06:42 PST

فرانس نے گذشتہ ماہ کی گیارہ تاریخ کو اپنے چار ہزار فوجی مالی بھیجے تھے

فرانس کے صدر فرانسواں اولاند نے کہا ہے کہ مالی کے شمالی علاقوں میں فرانسیسی افواج کی اسلامی شدت پسندوں کے خلاف کارروائی آخری مراحل میں داخل ہو گئی ہے۔

انہوں نے یہ بات سنیچر کو پیرس میں ایک نیوز کانفرنس کے دوران کہی۔

فرانسواں اولاند نے بتایا کہ ’افوغاص کے پہاڑوں میں شدید لڑائی ہو رہی ہے جہاں ہمارا خیال ہے کہ القاعدہ ان اسلامک مغرب کے کارکن چھپے ہوئے ہیں۔‘

انہوں نے اس کارروائی میں چاڈ کے فوجیوں کے فعال کردار کو بھی سراہا۔ چاڈ کی فوج کے مطابق جمعہ کو کارروائی میں چاڈ کے تیرہ فوجی بھی مارے گئے تھے جب کہ پینسٹھ باغی بھی اس کارروائی میں ہلاک ہوئے تھے۔

چاڈ نے مالی میں عسکریت پسندوں کے خلاف کارروائی میں دو ہزار سے زائد فوجی اہلکار افریقن یونین فورس کے تحت بھیجنے کا وعدہ کیا ہے۔

فرانسیسی صدر نے کہا کہ ’شمالی مالی میں شدید لڑائی جاری ہے۔ میں نے فرانس کے لوگوں کو پہلے ہی بتا دیا ہے کہ ہماری فوج براہ راست کارروائی کر رہی ہے اور ہمارے چاڈ کے دوستوں نے گذشتہ روز ایک کارروائی کی تھی جس میں متعدد عسکریت پسند ہلاک ہوئے تھے۔ میں اس کارروائی پر ان کو سراہتا ہوں۔‘

فرانس نے گذشتہ ماہ کی گیارہ تاریخ کو اپنے چار ہزار فوجی مالی بھیجے تھے اور اس فوجی مداخلت کا مقصد ان اسلام پسند جنگجوؤں کے خلاف کارروائی کرنا تھا جنہوں نے سنہ 2012 میں شمالی مالی پر قبضہ کر لیا تھا۔

اس آپریشن کے ابتدائی دور میں فرانسیسی فوج نے گاؤ، کدال اور ٹمبکٹو جیسے شہروں کو باغیوں کے قبضے سے چھڑوایا تھا اورگزشتہ ہفتے مالی کے شمالی حصے میں ایک بڑے علاقے میں اسلام پسندوں کے خلاف فوجی آپریشن شروع کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔