امریکہ: اسلحہ پر پابندی کے خلاف ریلیاں

آخری وقت اشاعت:  اتوار 24 فروری 2013 ,‭ 05:30 GMT 10:30 PST

منتظمین کا کہنا ہے کہ اسلحہ رکھنے کے قانون کو سخت کرنے کے خلاف ملک بھر میں سو سے زائد ریلیاں نکالی گئی ہیں

امریکہ میں اسلحہ رکھنے کے حق کے حامی افراد نے ملک کے مختلف شہروں میں آتشیں اسلحہ رکھنے کے قوانین میں صدر اوباما کی مجوزہ اصلاحات کے خلاف سو سے زائد ریلیاں نکالی ہیں۔

امریکہ کی انتہائی قدامت پسند ٹی پاٹی تحریک کے تحت یہ ریلیاں سنیچر کو نکالی گئیں اور اس دن کو مزاحمت کے دن کا نام دیا گیا تھا۔

صدر براک اوباما نے جان لیوا ہتھیاروں پر پابندی کی تجویز پیش کی ہے اور ان افراد کے کوائف کی جانچ کرنے کا ارادہ ظاہر کیا ہے جن کے پاس یہ ہتھیار ہوں۔ مظاہرین نے اس پابندی کو یہ کہہ کر مسترد کیا ہے کہ یہ ان کے ہتھیار رکھنے کے دستوری حق کے خلاف ہے۔

سنیچر کو ہونے والے ان مظاہروں کے ایک متظم ڈسٹن سٹاکٹن نے کہا کہ ’میں اسلحہ رکھنے کے قانون کو سخت کرنے کے خلاف نہیں ہوں۔ لیکن یہ کبھی بھی تسلیم نہیں کروں گا کہ حکومت ہمارے گھروں میں آ کر ہم سے یہ پوچھیں کہ ہم اپنی حفاظت کے لیے کونسا ہتھیار استعمال کرتے ہیں جو کہ ہمارا قانونی حق ہے۔‘

ملک بھر میں ان ریلیوں کے دوران واشنگٹن کے قریب میری لینڈ میں تقریباً سو لوگ جمع ہوئے۔ کئی لوگوں نے ایسی ٹی شرٹ پہنی تھیں جس پر سانپ بنا تھا اور لکھا گیا تھا’میرے اوپر چڑھائی مت کریں‘۔

واشنگٹن میں ہمارے نامہ نگار کے مطابق یہ نشان قدامت پسند ٹی پارٹی نے اپنایا ہے۔

ہیرالڈ ٹریبیون کے مطابق ساراسوٹا فلوریڈا میں پچاس کے قریب لوگ ریلی میں شریک ہوئے۔ ٹریبیون نے ٹیری چیلڈرز کے حوالے سے بتایا کہ’ یہ میرا وہ حق ہے جس کے لیے میں جان دینے کے لیے تیار ہوں۔‘

دوسرے لوگوں نے بھی پلے کارڈز اٹھائے تھے جس میں سے ایک کارڈ پر خودکار بندوق کی تصویر بنی تھی اور جس پر لکھا تھا ’آئیں اور اسے لے لیں‘۔

یہ مظاہرے اسلحہ کے حوالے سے قوانین کو سخت کرنے کے لیے مطالبات کے ایک ہفتے بعد شروع ہوئیں۔

امریکہ کے نائب صدر جو بائڈن نے جمعرات کو ایک تقریر میں کہا کہ اسلحہ پر قابو پانے میں ناکامی کے لیے ’اخلاقی قیمت ادا کرنی ہوگی‘۔ انہوں نے سیاستدانوں کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ سیاستدان امریکی بچوں کو تحفظ دینے کے بجائے اپنی سیاسی زندگی کے بارے میں خدشات کا شکار ہیں۔

ہمارے نمائندے کے مطابق ایک طرف صدر براک اوباما اسحہ پر پابندی اور اسحلہ رکھنے والوں کی جانچ پڑتال کے لیے مہم تیز کر رہے ہیں تو دوسری طرف ان کے مخالفین بھی متحرک ہو رہے ہیں۔

ہمارنے نمائندے کا مزید کہنا ہے کہ دونوں طرفین کے مابین عوام اور کانگرس کی حمایت حاصل کرنے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔