شام: صوبائی دارالحکومت میں شدید جھڑپیں

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 2 مارچ 2013 ,‭ 15:33 GMT 20:33 PST

شام میں حکومت مخالف جھڑپوں میں اب تک دسیوں ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں

شام کے ایک شمالی صوبے رقہ کے دارالحکومت میں سرکاری فوج اور باغیوں کے درمیان کئی جھڑپیں ہوئی ہیں۔

حکومت مخالف کارکنوں نے کہا ہے کہ سرکاری فوج نے شہر کے کئی علاقوں کو نشانہ بنایا ہے، جب کہ شہر کے مضافات میں صبح سے جاری جھڑپوں میں کئی درجن افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

داریا، دمشق کے نواح اور حلب شہر کے قریب پولیس اکیڈمی میں بھی جھڑپیں جاری ہیں۔

یہ تشدد شام میں جاری تنازعے کو ختم کرنے کے لیے سفارت کاری کی تازہ کوششوں کے درمیان ہوا ہے۔

شام میں جاری تنازع جان کیری کے بطور امریکی وزیرِ خارجہ پہلے بیرونی دورے کا اہم مسئلہ ہے۔

انھوں نے جمعے کے روز ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں کہا، ’امریکہ اور ترکی یہ سمجھتے ہیں کہ پہلی ترجیح سیاسی حل ہے۔ ہم زندگیاں بچانا چاہتے ہیں، نہ کہ انھیں جنگ کا شکار بنتے دیکھنا۔‘

شام میں جاری تنازع جان کیری کے بطور امریکی وزیرِ خارجہ پہلے بیرونی دورے کا اہم مسئلہ ہے

برطانیہ میں قائم شامی ادارہ برائے انسانی حقوق نے کہا ہے کہ رقہ شہر کے باہر ’صبح سے جاری جھڑپوں میں کئی سرکاری بٹالینز باغی دستوں کے خلاف لڑ رہی ہیں۔‘

تنظیم نے مزید بتایا ’سرکاری فوج نے شہر کے کئی محلوں اور مضافات کو نشانہ بنایا ہے، جب کہ جھڑپوں میں کئی درجن فوجی اور باغی مارے گئے ہیں۔‘

تاہم مرنے والوں کی تعداد کی تصدیق نہیں ہو سکی۔

رقہ شام اور ترکی کی سرحد کے قریب واقع ہے۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ یہاں ہزاروں ایسے افراد مقیم ہیں جو ملک میں جاری خانہ جنگی کی وجہ سے دوسرے علاقوں سے بھاگ کر ادھر آ بسے تھے۔

دریں اثنا، آن لائن پوسٹ کی جانے والی ایک ویڈیو میں ہزاروں افراد کو حلب کے باہر ایک پولیس اکیڈمی پر دھاوا بولتے دکھایا گیا ہے۔

ویڈیو میں کئی درجن جنگجو اکیڈمی کی عمارت کی طرف دوڑتے ہوئے اور بیرونی دیوار کے پیچھے پناہ لیتے نظر آ رہے ہیں۔ اسی دوران اکیڈمی کے اندر سے گولیوں اور دھماکوں کی آوازیں بھی سنائی دیتی ہیں۔

اس سے قبل جمعے کے روز شامی فوج نے لبنان کے ساتھ سرحد کے قریب واقع ایک چوکی پر دوبارہ قبضہ کر لیا تھا۔ رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ اس چوکی پر ایک روز قبل اسلامی جنگجوؤں نے قبضہ کر لیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔