لی کیچیانگ چین کے نئے وزیراعظم نامزد

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 15 مارچ 2013 ,‭ 05:16 GMT 10:16 PST

نو منتخب وزیرِ اعظم لی کیچیانگ (بائیں) اپنے جانشین کے ساتھ کھڑے ہیں، جب کہ صدر شی جن پنگ دائیں طرف کھڑے ہیں

چینی رہنماؤں نے لی کیچیانگ کو ملک کا نیا وزیرِ اعظم نامزد کیا ہے جو دنیا کی دوسری بڑی معیشت کا اقتدار سنبھالیں گے۔

لی اس وقت کمیونسٹ پارٹی میں دوسرے نمبر پر ہیں، اور وہ وین جیاباؤ کی جگہ لیں گے۔

اگرچہ لی کو پانچ سال کے مدت کے لیے منتخب کیا گیا ہے، تاہم توقع ہے کہ اپنے جانشین کی طرح وہ بھی اس عہدے پر دس سال گزاریں گے۔

جمعرات کو شی جن پنگ کو ملک کا نیا صدر منتخب کیا گیا جنھوں نے ہو جنتاؤ کی جگہ لی ہے۔

لی کیچیانگ کا متوقع انتخاب تین ہزار قانون سازوں نے بیجنگ میں پارلیمنٹ کے سالانہ اجلاس کے موقعے پر کیا۔ انھیں 2949 میں سے 2940 ووٹ ملے۔

وزیرِ اعظم کی حیثیت سے وہ متنوع داخلی امور پر توجہ دیں گے، جن میں معاشی چیلنج، چین کے ماحولیاتی مسائل اور آبادی کے شہروں کو منتقلی جیسے معاملات شامل ہیں۔

اس تقرری سے رہنماؤں کی ایک نسل سے دوسری نسل تک اختیارات کی منتقلی کا عمل شروع ہو گیا ہے۔ پارٹی کے اجلاس سے قبل ہفتے کے روز کئی نائب وزرائے اعظم اور ریاستی مشیران کا انتخاب کیا جائے گا۔

لی کی عمر 57 برس ہے اور وہ سابق رہنما ہو جنتاؤ کے قریبی ساتھی سمجھے جاتے ہیں۔ وہ انگریزی روانی سے بولتے ہیں اور انھوں نے معاشیات میں پی ایچ ڈی کر رکھی ہے۔

انھوں نے حکومت کے نظم و نسق پر توجہ دینے کا عزم ظاہر کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ کچھ وزارتیں ختم کر دیں گے جب کہ بعض وزارتوں کے حجم میں اضافہ کر دیا جائے گا۔

امریکی صدر نے فون کر کے دونوں نو منتخب چینی رہنماؤں کو مبارک باد دینے کے ساتھ ساتھ سائبر ہیکنگ اور شمالی کوریا جیسے مسائل پر بھی بات کی۔

وائٹ ہاؤس سے جاری کیے جانے والے ایک بیان میں کہا گیا، ’دونوں رہنماؤں نے زیادہ بڑی سطح پر تعلقات کی اہمیت اور تعاون پر اتفاقِ کیا۔‘

آنے والے دنوں میں صدر اوباما وزیرِ خزانہ جیکب لیو اور وزیرِ خارجہ جان کیری کو بیجنگ روانہ کریں گے، تاکہ نئی انتظامیہ کے ساتھ تعلقات قائم کیے جا سکیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔