شام: باغی کمانڈر ریاض الاسعد زخمی

آخری وقت اشاعت:  پير 25 مارچ 2013 ,‭ 12:56 GMT 17:56 PST
ریاض الاسعد

ریاض الاسعد نے جولائی 2011 میں صدر بشار الاسد کے خلاف مسلح بغاوت کی تھی

شام کے ایک باغی ملٹری کمانڈر کے بارے میں اطلاعات ہیں کہ وہ صوبے دیر الزور میں ہوئے ایک بم دھماکے میں زخمی ہو گئے ہیں۔

رضاکاروں کا کہنا ہے کہ جس موٹر کار میں باغی ملٹری کمانڈر کرنل ریاض الاسعد تھے اس کے برابر والی کار میں ایک دھماکہ ہوا جس میں وہ زخمی ہو گئے۔

اس دھماکے کے بعد متضاد رپورٹیں آ رہی ہیں لیکن ایف ایس اے کے ایک ترجمان نے بی بی سی عربی سروس کو بتایا کہ اس دھماکے میں انھوں نے اپنا ایک پاؤں کھو دیا ہے۔

برطانیہ میں سرگرم انسانی حقوق کے ایک رضاکار گروپ سیريئن آبزرویٹری کا کہنا ہے کہ کرنل اسعد اتوار کو ملک شام کے مشرقی شہر المیادین کا دورہ کر رہے تھے جب ایک بم ان کی کار کے پاس پھٹا اور اس میں ان کے پاؤں زخمی ہو گئے۔

عالمی خبر رساں ادارے اے ایف پی کا کہنا ہے کہ کرنل اسد کے ایک رشتے دار نے بتایا ہے کہ انہیں علاج کے لیے ترکی کے ایک ہسپتال میں منتقل کر دیا گیا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ ان کی حالت ٹھیک ہے۔

واضح رہے کہ ریاض الاسعد آزاد شامی فوج (ایف ایس اے) کے کافی زمانے سے سربراہ رہے ہیں۔

کرنل اسعد نے ایک زمانے میں صدر بشار الاسد کے خلاف مسلح بغاوت کی تھی لیکن رفتہ رفتہ ان کی حیثیت میں کمی آتی گئی۔

گزشتہ سال دسمبر کے مہینے میں ملک بھر کے ایف ایس اے کے 260 رہنماؤں نے انتالیا میں ہوئی ایک میٹنگ میں اس بات پر رضامندی ظاہر کی کہ ایف ایس اے ایک متحدہ کمانڈ کے تحت ہو۔

انھوں نے ایف ایس اے کی ایک 30 رکنی سپریم ملٹری کونسل (ایس ایم سی) کا انتخاب کیا اس کے بعد اس کونسل نے جنرل سلیم ادریس کو اپنا نیا ملٹری چیف منتخب کیا۔

کرنل اسعد کا کہنا ہے کہ بیرونی قوتوں نے انہیں میٹنگ میں مدعو نہیں کیا انھوں نے اس کے ساتھ ہی کہا کہ 'وہ ایسے افراد کو چاہتے ہیں جو ان کا کہنا مانیں۔'

شامی فضائیہ کے سابق کمانڈر جنھوں نے جولائی 2011 میں بغاوت کی تھی وہ مسلح بغاوت کی نمایاں شخصیت تھے اور انھیں شام میں باغیون کے ساتھ بارہا دیکھا جا سکتا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔