افغانستان: صوبہ فرح کی عدالت پر حملہ، پچاس ہلاک

افغانستان مغربی صوبے فرح کے شہر فرح کی صوبائی عدالت پر شدت پسندوں کے حملے میں کم از کم پچاس افراد ہلاک اور نوے سے زیادہ زخمی ہوئے ہیں۔

صوبائی حکام کے مطابق شدت پسندوں نے بارود سے بھری گاڑی عدالت کے باہر اڑا دی۔ اس دھماکے کے بعد فائرنگ کا سلسلہ شروع ہوا اور حملہ آوروں نے ایک عمارت میں پناہ لے لی۔

جس جگہ یہ دھماکہ کیا گیا ہے یہ ایک گنجان آباد علاقہ ہے جہاں بینک اور بازار واقع ہیں۔

افغان صوبے فرح کی سرحد ایران سے ملتی ہے اور یہاں ماضی میں بھی شدت پسند حملے کرتے رہے ہیں۔

شدت پسندوں نے یہ حملہ اس وقت کیا جب عدالت میں مشتبہ طالبان کے مقدمے کی سماعت جاری تھی۔ ایک غیر مصدقہ رپورٹ کے مطابق اس حملے میں مشتبہ طالبان کو رہا کرا لیا گیا ہے۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ دھماکے کے بعد حملہ آوروں اور سکیورٹی فورسز کی جانب سے مشین گن سے فائرنگ کی گئی اور گرینیڈز کا استعمال کیا گیا۔

فرح کے نائب گورنر محمد حونس نے ایک ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دھماکے میں گورنر آفس سمیت کئی سرکاری دفاتر اور غیر سرکاری تنظیموں کے دفاتر کو نقصان پہنچا ہے۔

محمد یونس کا کہنا تھا کہ دھماکے کے بعد حملہ آوروں نے مختلف عمارتوں میں پوزیشنیں سنبھال لیں۔

اسی بارے میں