شامی گروہ کا القاعدہ سے وفاداری کا اعلان

Image caption انصرا فرنٹ شام میں کئی خود کش حملوں اور کئی حکومتی اہدف کو نشانہ بنانے کا دعویٰ کرتی رہی ہے

شام میں صدر بشار الاسد کی حکومت کے خلاف جنگ میں شریک ایک شدت پسند باغی گروہ النصرہ فرنٹ نے القاعدہ کے سربراہ ایمن الظہوری سے اپنے وفادرای کا اعلان کیا ہے۔

النصرا فرنٹ کے سربراہ ابو محمد الجولانی نے کہا کہ ہے القاعدہ کے سربراہ سے اپنی عقیدت کے اظہار سے شام میں ان کے گروہ کے رویے پر کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔

النصرہ فرنٹ شام میں کئی خود کش حملوں اور کئی حکومتی اہدف کو نشانہ بنانے کا دعویٰ کرتی رہی ہے۔

ادھر عراق میں القاعدہ کے گروہ نے شام میں سرگرم النصرہ فرنٹ سے الحاق کا اعلان کیا ہے۔ البتہ النصرہ فرنٹ کے سربراہ الجولانی کا کہنا ہے کہ عراقی القاعدہ سےالحاق پر ان سے مشاورت نہیں کی گئی تھی۔

امریکہ النصرہ فرنٹ کو ایک دہشتگرد تنظیم قرار دے چکا ہے۔

امریکہ نے حال ہی میں اپنے ایک سابق فوجی کو النصرہ فرنٹ کے ہمراہ شام میں لڑائی میں حصہ کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

مغربی ممالک میں شامی باغیوں کو اسلحہ فراہم کرنے پر بحث ہو رہی ہے۔

بعض مغربی ماہرین کا خیال ہے کہ شامی باغیوں کو مہیا کیا جانے والا اسلحہ النصرہ فرنٹ جیسے القاعدہ کی حامی گروہوں کے ہاتھ لگا جائےگا۔