پیرس میں فرانسیسی فوجی پر چاقو سے حملہ

Image caption یہ حملہ پیرس کے لا دفانس علاقے میں کیا گیا جو پیرس کا کاروباری علاقہ ہے

فرانس کے وزیرِ دفاع کا کہنا ہے پیرس میں نامعلوم حملہ آور نے فرانسیسی فوجی کو اس کے فوج سے تعلق کی وجہ سے ہی نشانہ بنایا تھا۔

فرانس کے دارالحکومت پیرس کے اہم علاقے لا دفانس میں سنیچر کو گشت کرنے والے ایک باوردی فرانسیسی فوجی پر چاقو سے حملہ کیا گیا تھا۔

اس حملے میں فوجی زخمی ہو گیا تاہم اس کی حالت اب بہتر ہے۔ فوجی پر جس شخص نے حملہ کیا وہ بھیڑ کا فائدہ اٹھا کر فرار ہوگیا تھا اور پولیس اس کی تلاش میں ہے۔

وزیرِ دفاع ژاں زیوس لیدریان نے کہا ہے کہ فوجی کی جان لینے کی کوشش اس کے فرانسیسی فوج سے تعلق رکھنے کی وجہ سے ہی کی گئی اور یہ کہ ان کا ملک دہشتگردی کے خلاف جنگ جاری رکھے گا۔

زخمی ہونے والا فوجی فرانس کے انسداد دہشت گردی یونٹ کا حصہ ہے جو پیرس میں ممکنہ دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے گشت پر رہتا ہے۔

اس سے قبل فرانسیسی صدر فرانسوا اولاند نے کہا ہے کہ یہ فوجی جس نے وردی پہنی تھی اپنے دو ساتھیوں کے ہمراہ گشت پر تھا جب ان پر کسی نے پشت سے ایک چاقو یا کٹر کی مدد سے وار کیا۔

صدر فروانسوا اولاند نے یہ بات افریقی ملک ایتھیوپیا کے دارالحکومت ادیس ابابا میں کہی اور یہ بھی بتایا کہ پولیس حملہ آور کی تلاش میں ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس واقعے کو لندن کے علاقے وولچ میں برطانوی فوجی کے قتل سے جوڑنا قبل از وقت ہوگا۔ فرانسیسی صدر نے کہا کہ ’ابھی تک اس حملے کے معین حقائق پر کوئی بات نہیں کی جا سکتی ہے یا حملہ آور کے بارے میں کچھ کہا جا سکتا ہے مگر حکام تمام ممکنات کو مد نظر رکھ کر تفتیش کر رہے ہیں۔‘

اوٹ ڈی سین کے پولیس کے سربراہ پئیغی آندرے پیویل نے مقامی فرانسیسی زرائع ابلاغ کو بتایا کہ ’اس فوجی کا خون بہت ضائع ہو چکا تھا جب اسے قریبی فوجی ہسپتال لیجایا گیا۔ ان کا زخم کافی گہرا ہے مگر جان لیوا نہیں ہے۔‘ پیویل کے مطابق حملہ آور مصروف کاروباری علاقے میں جلد ہی غائب ہو گیا اس سے پہلے کے اس گشتی دستے میں شامل دوسرے فوجی ردِ عمل دکھاتے جو اس فوجی سے آگے چل رہے تھے۔

اسی بارے میں