صدر مرسی نے فوجی مہلت مسترد کر دی

Image caption صدر مرسی کی صدارت کا ایک سال سیاسی بے اطمینانی اور معیشت میں گراوٹ کی زد میں رہا

مصر کے صدر محمد مرسی نے ملک میں جاری سیاسی بحران کو حل کرنے کے لیے فوج کی جانب سے دی گئی اڑتالیس گھنٹوں کی مہلت کو یہ کہہ کر مسترد کر دیا ہے کہ اس سے صرف ابہام پیدا ہوگا۔

صدر کا اصرار ہے کہ وہ قومی اتفاقِ رائے پیدا کرنے کے لیے اپنا لائحہِ عمل جاری رکھیں گے۔

اس سے پہلے مصری فوج نے خبردار کیا تھا کہ اگر حکومت اور اس کے مخالفین ’عوام کے مطالبات‘ ماننے میں ناکام رہے تو فوج مداخلت کرے گی۔ تاہم مصری فوج نے بعد میں اس بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ان کا مقصد فوجی بغاوت نہیں بلکہ سیاسی جماعتوں پر موجودہ کشیدگی ختم کرنے کے لیے زور دینا ہے۔

دوسری جانب ریاستی خبر رساں ادارے مینا نے منگل کی صبح بتایا کہ وزیرِ خارجہ محمد کامل امر مستعفی ہو گئے ہیں۔ منظور ہونے کی صورت میں وہ چھٹے وزیر ہوں گے جنہوں نے ملک میں جاری احتجاج کے پیشِ نظر اپنا عہدہ چھوڑ دیا ہے۔

گذشتہ چند روز میں قاہرہ اور دوسرے شہروں میں لاکھوں مظاہرین نے صدر مرسی کے خلاف احتجاج کیا تھا۔

حزب اختلاف کی تحریک تمرود یعنی باغی کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق اگر صدر مرسی اقتدار سے الگ نہیں ہوئے اور انتخابات منعقد نہ ہونے دیے تو ان کے خلاف سول نافرمانی کی تحریک چلائی جائے گی۔

صدر مرسی کے مخالفین کا دعویٰ ہے کہ فوری انتخابات کے مطالبے کی ایک پٹیشن پر دو کروڑ بیس لاکھ افراد نے دستخط کیے ہیں۔

مظاہروں کے شروع ہونے کے ایک روز بعد قاہرہ میں صدر مرسی کی جماعت اخوان المسلمین کے مرکزی دفاتر پر حملہ کیا گیا۔ اخوان المسلمین کے دفتر کے باہر ہونے والے تصادم میں آٹھ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ اخوان المسلمین صدر مرسی کی جماعت ہے۔

فوج نے اڑتالیس گھنٹوں کی مہلت کی وضاحت کرتے ہوئے فوجی ترجمان کے فیس بک کے صفحے پر ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ بیان کا مقصد سیاسی جماعتوں پر زور دینا تھا کہ کشیدگی کو ختم کرنے اور لوگوں کے مطالبات پورا کرنے کے لیے قومی اتفاقِ رائے قائم کرے۔

بیان کے مطابق عسکری قیادت فوجی بغاوت کو پالیسی کے طور پر استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیتی۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ فوج 1977، 1986 اور 2011 میں مصر کی گلیوں میں رہی لیکن فوجی بغاوت نہیں کی۔

بیان میں یہ دعویٰ بھی کیا گیا ہے کہ فوج ہمیشہ لوگوں کی حمایت کرتی رہی۔

Image caption صدر مرسی کے مخالفین کا دعویٰ ہے کہ فوری انتخابات کے مطالبے کی ایک پٹیشن پر دو کروڑ بیس لاکھ افراد نے دستخط کیے ہیں

اس سے قبل تحریر سکوائر سے بی بی سی کے نامہ نگار علیم مقبول نے بتایا کہ’مظاہرے میں شامل بہت سے افراد کو ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ صدر مرسی نے انھیں دھوکہ دیا۔ مظاہرین کہتے ہیں کہ صدر مرسی کو مصری عوام کو متحد کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں تھی حالانکہ انھوں نے اس کا وعدہ کیا تھا۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ صدر کا اندازِ حکومت صرف اپنی پارٹی کے مفادات کو سامنے رکھتا ہے۔‘

’دوسری جانب صدر مرسی کا اس بات پر اصرار ہے کہ انھوں نے حزبِ مخالف کے گروہوں کو مشاورت کی دعوت تو دی ہے مگر انھوں نے تعاون نہیں کیا۔ صدر کے حامی کہتے ہیں کہ مصر میں جو بھی بڑے بڑے مسائل ہوں، استحکام کے لیے صدر مرسی کو اپنی مدت مکمل کرنی چاہیے۔‘

اس سے قبل اپنی صدارت کے ایک سال کے موقع پر صدر مرسی نے کہا تھا کہ ملک میں جاری بے اطمینانی کے اظہار سے ’مصر کے مفلوج ہونے کا خطرہ‘ ہے۔

مرسی 30 جون 2012 کو انتخاب میں کامیابی کے بعد مصر کے پہلے اسلامی صدر بنے تھے۔ان کی صدارت کا ایک سال سیاسی بے اطمینانی اور معیشت میں گراؤٹ کی زد میں رہا۔

اسی بارے میں