’وہ تو مجھے ٹماٹر کی دکان دکھا رہی تھی‘

Image caption عدالت نےاخلاق کو طوائف کی خدمات حاصل کرنے کے جرم میں 400 پاؤنڈ جرمانہ کیا

برطانوی مڈلینڈز میں ایک شخص نے طوائف کے ساتھ گاڑی میں پکڑے جانے پر پولیس کو بتایا کہ ان کی گاڑی میں بیٹھی خاتون انہیں ٹماٹر کی دکان دکھا رہی تھی۔

مڈلینڈز پولیس کے مطابق انھوں نو مئی کو محمد اخلاق کی نسان مائیکرا گاڑی میں ایک خاتون کو دیکھا جبکہ وہ خودکار کیش مشین سے رقم نکال رہے تھے۔

اخلاق نے پولیس کو بتایا کہ وہ ان پیسوں سے ٹماٹر خریدنے کا ارادہ رکھتے تھے۔ تاہم پولیس اہلکاروں نے گاڑی میں سوار علاقے کی مشہور طوائف کو پہچان لیا تھا۔

وال سیل کی پولیس کانسٹیبل سٹیسی پیٹرسن نے کہا: ’میں نے اس سے پہلے بھی بڑے بہانے سنے ہیں لیکن پولیس میں اپنی دس سالہ سروس کے دوران میں نے کبھی کسی شخص کو سیکس کے لیے طوائف کو گاڑی میں بٹھانے کے جرم کو چھپانے کے لیے ٹماٹر خریدنے کا بہانہ کرتے نہیں دیکھا۔‘

انھوں نے کہا ’پولیس نے اخلاق کے جھوٹ کو پکڑ لیا اور وہ عدالت میں مجرم پائے گئے ہیں۔‘

محمد اخلاق کی عمر 39 سال ہے اور وہ نیو سٹریٹ ڈیوڈلی کے رہنے والے ہیں۔

عدالت نے انہیں نہ صرف طوائف کی خدمات حاصل کرنے کے جرم میں 400 پاؤنڈ جرمانہ کیا بلکہ کہا کہ وہ عدالتی خرچ کی مد میں مزید 665 پاؤنڈ ادا کریں۔