میں عورت ہوں: بریڈلی میننگ

Image caption میننگ کی یہ تصویر عدالت میں بطور شہادت پیش ہوئی جس میں انھوں نے وگ پہن رکھی ہے اور ہونٹوں پر سرخی لگائی ہوئی ہے

امریکی فوجی بریڈلی میننگ نے اعلان کیا ہے کہ وہ بطور عورت زندگی گزارنا چاہتے ہیں۔

انھوں نے خفیہ سرکاری دستاویزات وکی لیکس کے ذریعے سے افشا کی تھیں جس پر انھیں 35 برس قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

انھوں نے امریکی ٹیلی ویژن این بی سی کے پروگرام ٹوڈے میں ایک بیان میں کہا: ’میرا نام چیلسی میننگ ہے اور میں عورت ہوں۔‘

25 سالہ میننگ نے کہا کہ وہ بچپن ہی سے اپنے آپ کو لڑکی محسوس کرتے تھے۔ انھوں نے کہا کہ وہ فوری طور پر ہارمون تھراپی شروع کرنا چاہتے ہیں اور ان کی خواہش ہے کہ انھیں چیلسی کہہ کر پکارا جائے۔

پرائیویٹ میننگ کو جاسوسی سمیت دوسرے الزامات کے تحت 35 برس قید کی سزا سنائی گئی تھی، تاہم ان کے وکیل ڈیوڈ کومبز نے کہا ہے کہ انھیں سات برس کے بعد پیرول پر رہائی مل سکتی ہے۔

کومبز نے صدر براک اوباما سے درخواست کی ہے کہ وہ میننگ کو معافی دے دیں، اور کہا ہے کہ وہ اس فیصلے کے خلاف اپیل کریں گے۔

وگ اور لپ سٹک

میننگ ریاست کینسس کی فورٹ لیون ورتھ جیل میں اپنی سزا پوری کریں گے۔ ان کے وکیل نے کہا کہ اگر جیل کے حکام نے انھیں ہارمون تھراپی دینے سے انکار کیا تو وہ قانونی چارہ جوئی کر سکتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ میننگ نے ابھی یہ نہیں کہا کہ وہ آیا تبدیلیِ جنس کا آپریشن کروانا چاہتے ہیں۔

جب یہ سوال کیا گیا کہ میننگ نے سزا ملنے کے ایک دن بعد یہ اعلان کیوں کیا ہے تو کومبز نے کہا: ’چیلسی یہ نہیں چاہتی تھیں کہ اس کی وجہ سے ان کا کیس پس منظر میں چلا جائے۔‘

میننگ کے خلاف کورٹ مارشل کے مقدمے میں وکلائے صفائی نے ان کی جنس کے باعث شناخت کے مسئلے کو کلیدی نکتہ بنایا تھا۔

وکلائے صفائی کے گواہوں، بشمول ان کے ڈاکٹروں، نے شہادت دی تھی کہ میننگ جنس تبدیل کر کے عورت بننا چاہتے تھے۔ انھوں نے اس بات کا عندیہ دیا کہ ان مسائل کی وجہ سے ان کی ذہنی حالت متاثر ہوئی۔

میننگ کے ایک سابق فوجی افسر نے عدالت کو بتایا کہ میننگ نے انھیں اپنی ایک تصویر بھیجی تھی جس میں انھوں نے سنہرے بالوں والی وگ پہن رکھی تھی اور ہونٹوں پر سرخی لگائی ہوئی تھی۔

اسی بارے میں