سری لنکا: کتوں کی اجتماعی شادی کی مذمت

Image caption پولیس کے سپاہیوں نے اس پروقار تقریب میں تقربیاً ایک ہزار مہمانوں کو دودھ، چاول اور کیک پیش کیا

سری لنکا کے وزیرِ ثقافت نے پولیس کے کتوں کی دھوم دھام سے شادی کروانے کی شدید مذمت کی ہے۔

وزیر کا کہنا ہے کہ کتوں کی شادی میں بدھ مت کی روایتی علامات کو استعمال کیا گیا۔

پولیس نے سفید کپڑے والے پھولوں سے لیس پلیٹ فارم پر کتوں کے نو جوڑوں کی شادی روایتی انداز میں کی۔

دلہنوں نے سفید دستانے، شال اور ٹوپیاں جبکہ دلہوں نے سرخ ٹائیاں پہنی تھیں۔

پولیس کے سپاہیوں نے اس پروقار تقریب میں تقربیاً ایک ہزار مہمانوں کو دودھ، چاول اور کیک پیش کیا۔

شادی کے بعد کتوں کے جوڑوں کو ہنی مون کے لیے پولیس کی وین میں پر فضا مقام نیوارا ایلیا لے جایا گیا۔

پولیس کتوں کی شادی کروانے کا دفاع کرتے ہوئے کہتی ہے کہ اس کا مقصد گھریلوں سطح پر سراغ رساں کتوں کی افزائش نسل کو فروغ دینا ہے تاہم ایک بیان میں پولیس نے اپنے اقدامات پر معافی بھی مانگی ہے۔

وزیرِ ثقافت ٹی بی ایکانیاکی نے کہا کہ پولیس افسروں نے بدھ مت کی پیروی کرنے والے ایک ملک میں شادی کی روایتی رسم کی توہین کی ہے۔

انھوں نے کہا کہ کتے کے جوڑوں کو بدھ مت کے روایتی پوروا سٹیج پر بٹھایا گیا جو سینہالی کی روایتی شادیوں میں استعمال ہوتا ہے۔

وزیرِثقافت نے صحافیوں کو بتایا ’ہماری ثقافت میں یہ چیزیں قابلِ قبول نہیں ہیں‘

انھوں نے کہا کہ پولیس نے کینڈی جیسے شہر میں جہاں بدھا کا بڑا مندر قائم ہے کتوں کی شادیاں کروا کر تمام روایات کو پامال کیا ہے اور میں اس کی مذمت کرتا ہوں‘۔

ٹی بی ایکانیاکی نے کہا کہ سری لنکا میں ایسا واقعہ پہلے کبھی نہیں ہوا اور انھوں نے پولیس کے سربراہ کو اس واقعے کی مکمل تحقیقات کروانے کا کہا ہے۔

دوسری جانب پولیس کا کہنا ہے کہ جہاں کتوں کی شادی کروائی گئی اس کا بدھ مت سے کوئی تعلق نہیں اور کتوں کو سٹیج پر اس لیے بٹھایا گیا تاکہ ان کی معیاری تصویری بنائیں جا سکیں۔

پولیس نے ایک بیان میں کتوں کی شادی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اس کا رسم و رواج سے کوئی تعلق نہیں اور ان کو صرف تصویریں بنوانے کے لیے سٹیج پر بٹھایا گیا تھا‘۔

انھوں نے عوام کے جذبات کو ٹھیس پہنچنے پر معافی بھی مانگی ہے۔ سری لنکا میں 75 فیصد سنہالی اور بدھ مت سے تعلق رکھنے والے افراد آباد ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ان شادیوں کا مقصد گھریلوں سطح پر سراغ رساں کتوں کے افزائشِ نسل کو فروغ دینا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ سری لنکا نے سنہ 2011 میں ہالینڈ سے پولس کے لیے کتے درآمد کرنے پر 5,26,000 ہزار امریکی ڈالر خرچ کیے۔

اسی بارے میں